مقبول خبریں
پاکستان میں صاف پانی کی سہولت کو ممکن بنانے کیلئے مختلف منصوبوں پر کام کرونگی:زارہ دین
پیپلزپارٹی کے رہنما ندیم اصغر کائرہ کی پریس کانفرنس ،صحافیوں کے سوالات کے جوابات دیئے
واجد خان ایم ای پی کا آزاد کشمیر سے آئے حریت کانفرنس کے رہنمائوں کے اعزاز میں عشائیہ
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
جموں و کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے زیر اہتمام پہلی کشمیر کلچرل نمائش کا اہتمام
دسمبر بے رحم اتنا نہیں تھا!!!!!!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
ڈبلیو کاپ کے زیراہتمام ڈیم فنڈ ریزنگ تقریب، چیف جسٹس آف پاکستان کی خصوصی شرکت
لندن(خصوصی رپورٹ:اکرم عابد) چیف جسٹس پاکستان جسٹس ثاقب نثار چوہدری نے کہا ہے کہ پاکستانی حکمران اور ماضی کی حکومتیں ملک میں پانی کے بحران کو نظر انداز کرکے بہت بڑے جرم کی مرتکب ہوئی ہیں، جو کام ہمیں پچاس سال پہلے لازمی طور پر شروع کردینا چاہیئے تھا وہ اب کیا جارہا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے ڈبلیو کاپ کے زیراہتمام ڈیم فنڈ ریزنگ ایونٹ کے بعد صحافیوں سے خصوصی گفتگو میں کیا، اس موقع پر تنظیم کے چیئرمین ناہید رندھاوا اور سیکریٹری جنرل چوہدری ماجد اسماعیل بھی موجود تھے۔ چیف جسٹس کا مزید کہنا تھا کہ پاکستان کے مختلف حصوں میں کبھی پانی آسانی سے بورنگ کرکے حاصل کرلیا جاتا تھا اب عالم یہ ہے کہ سینکڑوں فٹ کھدائی کے باوجود پانی کا آثار نظر نہیں آتے، انہوں نے اوورسیز کمیونٹی کا شکریہ ادا کیا کہ جس نے ہمیشہ کیطرح پاکستان کو ایک مشکل سے نکالنے کیلئے جسطرح جوش و خروش سے حصہ لیا وہ مثالی ہے۔ چیئرمین ورلڈ کانگریس آف اوورسیز پاکستانیز ناہید رندھاوا نے اس موقع پر شرکا کو بتایا کہ انہوں نے تمام فنڈز کیلئے حکومت پاکستان اور سپریم کورٹ کی طرف سے جاری کردہ اکائونٹس میں ہی رقوم جمع کرانے کی حوصلہ افزائی کی انکا کہنا تھا کہ اس ایونٹ میں کل بارہ لاکھ نواسی ہزار سات سو اکیاون پائونڈز کی خطیر رقم اکٹھی ہوئی، انہوں نے اس موقع پر بیسٹ وے گروپ کے چیئرمین سر انور پرویا اور چیف ایگزیکٹیو ضمیر چوہدری سمیت تمام کمیونٹی آرگنازیشنز اور شخصیات کا شکریہ ادا کیا جنہوں نے اس قومی مسئلے کے حل کیلئے بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔