مقبول خبریں
دار المنور گمگول شریف سنٹر راچڈیل میں جشن عید میلاد النبیؐ کے حوالہ سےمحفل کا انعقاد
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
دنیا میں القاعدہ کوکبھی بھی پاکستان کی مددکےبغیرشکست نہیں ہوسکتی تھی: میجر جنرل آصف غفور
لندن (خصوصی رپورٹ: اکرم عابد) برطانیہ کے سرکاری دورے پر آئے ڈی جی آئی ایس پی آر میجر جنرل آصف غفور نے برٹش پارلیمنٹیرینز کی دعوت پر ہائوس آف لارڈز کا دورہ کیا اس موقع پر لارڈ ویسٹ، لارڈ ایرل، بیرونس سعیدہ وارثی، لارڈ نذیر احمد اور پائولا شیرف ایم پی سمیت دیگر نے انکا استقبال کیا۔ میجر جنرل آصف غفور نے انہیں دہشت گردی کے خلاف افواج پاکستان کی جنگ اور قربانیوں سے آگاہ کیا۔ برطانوی پارلیمنٹیرینز کا کہنا تھا کہ اس امر میں وئی شک نہیں کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف بہت بڑی جنگ لڑی ہے۔ اس سے قبل ڈی جی آئی ایس پی آر وارک یونیورسٹی پاکستانی طلبہ سوسائیٹی کی دعوت پر کونٹری گئے اور طلبی و طالبات سے خطاب کیا۔ انکا کہنا تھا کہ پاکستان کی خواہش ہےامریکاافغانستان میں مکمل امن آنےتک رہے کیونکہ پاکستان اورافغانستان کاامن ایک دوسرےسےمشروط ہے۔ انکا کہنا تھا کہ دنیامیں القاعدہ کوکبھی بھی پاکستان کی مددکےبغیرشکست نہیں ہوسکتی تھی۔ پاک فوج کے آپریشن سےدہشتگردوں کی کارروائیاں صفر ہوچکی ہیں اسلیئے دنیا کو دہشت گردی بارے پاکستان کی قربانیوں کا ادراک کرنا ہوگا۔ یو این مشن کے تحت پاکستان عالمی امن کیلئے بھی گرانقدر خدمات سے چکاعالمی امن مشن میں افواج پاکستان کے 250 جوان جام شہادت نوش کرچکے ہیں۔ واضع رہے برطانوی دورے کی قیادت آرمی چیف جنرل آصف باجوہ نے کی تھی جو دو روزہ دورے کے بعد وطن واپس روانہ ہوگئے تھے جبکہ میجر جنرل آصف غفور نے اضافی مصروفیات کی وجہ سے مزید دو دن قیام کیا۔