مقبول خبریں
راچڈیل مساجد کونسل کی طرف سے مئیر کونسلر محمد زمان کی مئیر چیرٹیز کیلئے فنڈ ریزنگ ڈنر کا اہتمام
اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی سیل بنایا جانا چاہئے: سلیم مانڈوی والا
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
برطانیہ میں آباد تارکین وطن کی مسئلہ کشمیر پر کاوشیں قابل تحسین ہیں:چوہدری محمد سرور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
کشمیریوں کو ان کا حق دیئے بغیر خطے میں پائیدار امن کا حصول ممکن نہیں: راجہ نجابت حسین
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
برطانیہ میں مقیم کشمیری و پاکستانی 16مارچ کو بھارت کے خلاف مظاہرہ کریں گے: راجہ نجابت حسین
وہ بے خبر تھا سمندر کی بے نیازی سے!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
ایون فیلڈ ریفرنس میں سابق وزیر اعظم میاں نواز شریف کی درخواست پر فیصلہ محفوظ
اسلام آباد: احتساب عدالت میں لندن فلیٹس ریفرنس کی سماعت ہوئی، واجد ضیاء کی جانب سے مختلف دستاویزات پیش کر دی گئیں۔ نواز شریف کی دائر متفرق درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا گیا۔ فلیگ شپ ریفرنس سے متعلق آف شور کمپنیوں کی دستاویزات اور امارات سفارتخانے کا جواب بھی عدالت میں پیش کر دیا گیا۔مریم نواز کے وکیل نے واجد ضیاء کی دستاویزات پر اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ کچھ دستاویزات تو عربی میں ہیں، شاید واجد ضیاء کو عربی سمجھ آئے، انھوں نے عربی میں ڈگری حاصل کر رکھی ہے۔ جے آئی ٹی کے خطوط کے جواب میں برطانوی ایم ایل اے کا جوابی خط بھی عدالت میں پیش کیا گیا۔ امجد پرویز نے کہا کہ انھیں وہ خط نہیں دیے گئے جن کے جواب میں یہ خط آئے۔ کیسے پتہ لگے گا یہ کون سے خط کا جواب ہے۔مریم نواز کے وکیل نے کہا ہے کہ ریفرنس تین میں ملزمان کو دی جانے والی کاپی میں صفحہ 235، 243 اور والیم تین کے اضافی آٹھ صفحات کیوں غائب ہیں؟ نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ بائنڈنگ کے وقت کچھ صفحات رہ گئے ہوں گے، اضافی آٹھ صفحات فراہم کر دیں گے۔ مریم نواز کے وکیل نے اعتراض کرتے ہوئے کہا کہ خط کے بغیر صرف جواب کیسے ریکارڈ کا حصہ بن سکتا ہے؟ نیب پراسیکوٹر نے کہا کہ بھیجے جانے والے خطوط والیم 10 میں ہیں۔واجد ضیاء نے نیلسن، نیسکال اور کومبر گروپ کی ٹرسٹ ڈیڈ کی فرانزک رپورٹ جبکہ کیپیٹل ایف زیڈ ای میں نواز شریف کی ملازمت سے متعلق اقامہ بھی احتساب عدالت میں پیش کر دیا گیا۔ کیس کی مزید سماعت 22 مارچ کو ہو گی۔