مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کا انتخاب، اپوزیشن اتحاد جیت گیا
اسلام آباد:بلوچستان سے تعلق رکھنے والے صادق سنجرانی کو پیپلز پارٹی، تحریک انصاف، فاٹا اراکین اور ایم کیو ایم کی حمایت حاصل تھی۔ ڈپٹی چیئرمین کیلئے سلیم مانڈوی والا اور عثمان کاکڑ کے درمیان مقابلہ تھا۔سینیٹ میں اپوزیشن کے اتحاد نے بلوچستان سے تعلق رکھنے والے صادق سنجرانی کو بالاخر نیا چیئرمین سینیٹ منتخب کرا لیا ہے۔ خفیہ رائے شماری کے ذریعے ہونے والے انتخاب میں 103 سینیٹرز نے اپنے ووٹ کاسٹ کیے۔ صادق سنجرانی کو 57 جبکہ ان کے مدمقابل حکومتی اتحاد کے امیدوار راجا ظفر الحق صرف 43 ووٹ حاصل کر پائے۔ سینیٹر سردار یعقوب خان ناصر نے نومنتخب چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی سے حلف لیا جس کے فوری بعد انہوں نے ایوانِ بالا کے قائد کی نشست سنبھال لی۔اس کے بعد ڈپٹی چیئرمین سینیٹ کیلئے ووٹنگ ہوئی جس میں اپوزیشن کی جانب سے سلیم مانڈوی والا اور حکومتی اتحاد کی جانب سے عثمان کاکڑ مدمقابل آئے۔ سلیم مانڈوی والا 54 ووٹ لے کر ڈپٹی چیئرمین سینیٹ منتخب ہوئے جبکہ عثمان کاکڑ 44 ووٹ حاصل کر پائے۔ خیال رہے کہ ڈپٹی چیئرمین کے انتخاب میں ایم کیو ایم کے سینیٹرز نے حصہ نہیں لیا۔بلوچستان کے علاقے چاغی سے تعلق رکھنے والے نومنتخب چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کا عوامی سیاست سے کوئی تعلق نہیں رہا تاہم وہ سابق وزرائے اعظم میاں محمد نواز شریف اور یوسف رضا گیلانی کے کوآرڈینیٹر رہ چکے ہیں۔ صادق سنجرانی 1998ء میں میاں نواز شریف کے کوآرڈینیٹر رہے جبکہ بعد ازاں 2008ء میں اس وقت کے وزیرِ اعظم یوسف رضا گیلانی کا کوآرڈینیٹر مقرر کیا گیا جس کے بعد وہ پانچ سال تک اسی منصب پر فائز رہے۔ رپورٹس کے مطابق صادق سنجرانی سابق صدر آصف علی زرداری سے قریبی تعلقات رکھتے ہیں۔چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کا سینیٹ سے روانگی سے قبل صحافیوں سے گفتگو میں کہنا تھا کہ میں آصف زرداری اور عمران خان سمیت تمام دوستوں کا مشکور ہوں، ایوانِ بالا میں سب کو ساتھ لے کر چلوں گا اور کسی کے ساتھ کسی قسم کی نا انصافی نہیں ہونے دونگا۔ صوبہ بلوچستان اور پاکستان کی تعمیر و ترقی کے لیے اپنا بھرپور کردار ادا کرونگا۔ صادق سنجرانی کا کہنا تھا کہ میں وزیرِ اعلی بلوچستان کا مشکور ہوں جنہوں نے میرا انتخاب کیا۔