مقبول خبریں
آشٹن گروپ کی جانب سے پوٹھواری شعر و شاعری کی محفل،شعرا نے خوب داد وصول کی
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
سری لنکا میں مسلمانوں اور بدھوں کے درمیان جھڑپوں کے بعد ریاستی ایمرجنسی نافذ
کولمبو: سری لنکا میں مسلمانوں اور بدھوں کے درمیان جھڑپوں کے بعد 10 روزہ ریاستی ایمرجنسی نافذ کردی گئی۔ بدھوں نے مسلمانوں کے گھر اور دکانیں نذر آتش کردیں۔سری لنکا کے شہر کینڈی میں مسلمانوں اور بدھوں کے درمیان جھڑپیں جاری ہیں۔ بدھوں نے مسلمانوں کے گھر اور دکانوں کو آگ لگادی ہے۔ بڑے پیمانے پر ہلاکتوں اور مالی نقصان کے بعد حکومت نے حالات کنٹرول کرنے کے لیے 10 روزہ ریاستی ایمرجنسی کے نفاذ کا اعلان کیا ہے، جس کے بعد پولیس نے علاقے میں کرفیولگادیا ہے۔سری لنکن حکومت کے ترجمان کا کہنا تھا کہ کینڈی سے پھوٹنے والے فسادات نے پورے ملک کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے، جس کے بعد بدھ آبادی اور مسلم آبادی کے کئی گھروں کو نذر آتش کردیا گیا ہے۔مشتعل بدھ پرستوں نے ایک مسجد کو بھی آگ لگا دی۔ مسلمانوں اور بدھوں کے درمیان کشیدگی گزشتہ سال شروع ہوئی تھی، جب بدھوں نے الزام لگایا کہ مسلمان لوگوں کو اپنا مذہب بدلنے پر مجبور کررہے ہیں۔ بدھ روہنگیا مسلمانوں کے سری لنکا میں پناہ لینےکے بھی خلاف ہیں۔ واضح رہے کہ سری لنکا میں مسلمانوں کی تعداد کل آبادی کا 9 فیصد ہے۔ بدھ مت ماننے والوں کی تعداد 75 فیصد ہے اور 13 فیصد دیگر مذاہب سے تعلق رکھنے والے افراد آباد ہیں۔