مقبول خبریں
ن لیگ برطانیہ و یورپ کا نواز شریف،مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزائیں معطل ہونے پر اظہار تشکر
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
ووٹ حاصل کرنے کے لالچ میں ووٹر کی خدمت بھی جرم، پتہ تو ہے مگر خیال رکھنا ضروری!!
مانچسٹر ...مہمانداری ایشیائی افراد کے خون میں اچی بسی ہوتی ہے شائد اس حقیقت کو جانتے ہوئے برطانیہ میں متحرک ایشیائی سیاستدانوں کی پارٹیوں کی نظر انداز کر دیا جاتا ہے ورنہ ایسی بھی مثال موجود ہے کہ ایسکس کی ایک کونسلر کو تحقیقات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے کہ انہوں نے الیکشن کے دوران معمر ووٹرز کو جائے اور بسکٹ اس نیت سے پیش کئے کہ ان سے ہمدردی کے ووٹ حاصل کئے جایئں۔ کونسلر سوسن شنک کو الیکشن سے قبل چائے اور کیک کے عوض پنشنرز کے ووٹ خریدنے کا الزام ثابت ہونے کی صورت میں ایک سال قید کی سزا ہوسکتی ہے۔ معروف برطانوی اخبار کی ایک رپورٹ کے مطابق کونسلر سوسن شنک سٹیفورڈ کلیز میں اپنی سیٹ پر فاتح قرار دینے سے قبل پکی ہوئی اشیاء ایک شیلٹرڈ ہائوسنگ کمپلیکس لے گئی تھیں جس پر ان کے مخالفین کی پولیس کو کی گئی رپورٹ میں الزام عائد کیا گیا ہے کہ سوسن کی ووٹوں پر اثر اندوز ہونے کی کوشش میں" ٹریٹنگ " سے انتخابی قانون کی خلاف ورزی ہوئی ہے ایسیکس پولیس اب الزام کی تحقیقات کررہی ہے جو کہ ر پریزنٹیشن آف دی پیپل ایکٹ 1983 کی شق 114 کے تحت ارتکاب جرم کے زمرے میں آتا ہے اگر ان کے خلاف الزام ثابت ہوگیا تو انہیں ایک سال تک کی سزا یا جرمانے کا سامنا کرنا ہوگا۔ یہ صورتحال ان ایشیائی سیاستدانوں کیلئے ضرور الارمنگ ہوگی جو چائے بسکٹ چھوڑ ڈنر پارٹیوں پر بھی ووٹرز کو بلانے میں عار محسوس نہیں کرتے نیتوں کا حال تو بہرحال خدا ہی بہتر جانتا ہے لیکن آجکل ذاتی مخالفتیں جس طرح عروج پر ہیں اندر کے لوگ ہی بھانڈا پھوڑ سکتے ہیں کہ ووٹرز کی خدمت صرف الیکشن کے دوران یا کچھ روز قبل ہی کیوں؟