مقبول خبریں
عبدالباسط ملک کے والدحاجی محمد بشیر مرحوم کی روح کے ایصال ثواب کیلئے دعائیہ تقریب
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
سعودی عرب منشیات سمگلنگ کیس، پاکستانی مجرم کا سر قلم، اس سال 71 لوگ سزا بھگت چکے
جدہ ... دنیا میں جہاں آئے روز سزائوں میں انسانی حقوق کی بنیاد پر کمی کی جارہی ہے وہیں صعدی عرب دنیا کا واحد ملک ہے جو منشیات کی سمگلنگ، قتل، زنا اور ڈکیتی جیسی وارداتوں میں ملوث افراد کو موت کی سزا دیتا ہے لیکن اس کے باوجود جرائم سے پاک خطہ اسے بھی نہیں کہا جا سکتا۔ گذشتہ روز ہی منشیات اسمگل کرنے کے جرم میں سعودی عرب کے مشرقی صوبے قطیف میں ایک پاکستانی باشندے کا سر قلم کر دیا گیا ہے۔ سعودی وزارت داخلہ کے مطابق جعفر غلام علی کو اس وقت گرفتار کی گیا تھا، جب وہ منشیات کی ايک بڑی مقدار اسمگل کرنے کی کوشش میں تھا۔ واضع رہے کہ سعودی عرب میں تارکین وطن کی ایک بڑی تعداد آباد ہے روزانہ لاکھوں لوگ ملک میں آتے اور جاتے ہیں۔ سعودی حکام کا کہنا ہے ممکن ہے ایسے میں کبھی کوئی شخص اپنے مذموم مقاصد میں کامیاب بھی ہوجاتا ہو لیکن ایسی حرکت کرنے سے پہلے ہر شخص کو سو بار سوچ لینا چایئے کہ پکڑے جانے پر اسکا انجام کیا ہو گا کیونکہ عام طور پر مجرم کا سر کھلے میدان میں لوگوں کی موجودگی میں کیا جاتا ہے تاکہ دوسرے عبرت پکڑیں۔ اس حوالے سے انٹرنیٹ ایسی ویڈیوز سے بھی بھرا پڑا ہے۔ بین الاقوامی نیوز ایجنسی اے ایف پی کا کہنا ہے کہ اعداد و شمار کے مطابق سعودی عرب میں رواں برس اکہتر افراد کے سر قلم کیے جا چکے ہیں۔ سن دو ہزار بارہ میں عصمت دری، قتل، مرتد ہونے، مسلح ڈکیتی اور منشیات کے جرائم میں کم از کم پچھہتر افراد کو سزائے موت دی گئی تھی۔