مقبول خبریں
عمران لورز برطانیہ کا قصور میں زینب کے قتل اور زیادتی کے خلاف احتجاجی مظاہرہ
سانحہ قصور:سمائل ایڈ کے زیر اہتمام افضل خان ایم پی اور ناز شاہ ایم پی کے زیر صدارت تقریب
پاک برٹش انٹر نیشنل ٹرسٹ کے چیئرمین چوہدری سرفراز کی جانب سے عشائیہ کی تقریب
آشیانہ ہاؤسنگ سکیم میں مبینہ کرپشن، نیب نے وزیر اعلیٰ شہباز شریف کو طلب کر لیا
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی فائرنگ،2زخمی،احتجاج،مظاہرے،انٹر نیٹ بھی معطل
کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی پامالیوں کو رکوانے کے سلسلہ میں پروگرام کا انعقاد
برطانیہ کے ساحلی شہر سائوتھ ہیمپٹن میں ملی نغموں کی گونج، ڈپٹی میئر کی خصوصی شرکت
برطانیہ کے کسی بھی پہلے ڈپٹی مئیر کا دورہ سپین،شاندار استقبال کیا گیا
یروشلم بطور اسراییلی دارلحکومت اور مسلمانوں کا ردِعمل
پکچرگیلری
Advertisement
کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی پامالیوں کو رکوانے کے سلسلہ میں پروگرام کا انعقاد
لوٹن:بھارتی افواج کی جانب سے کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی بدترین پامالیوں کو رکوانے اور برطانیہ اور یورپ میں مسئلہ کشمیر کی مناسبت سے پرزور تحریک چلانے کی اہمیت کو پیش نظر رکھتے ہوئے لندن کے نواحی شہر لوٹن ایک کشمیر پر ایک پروگرام منعقد ہوا جس کے مہمانان خصوصی آزادکشمیر قانون ساز اسمبلی کے رکن پیر سید علی رضا بخاری اور ملتان سے برطانیہ کے دورے پر آئے ہوئے کاروباری اور مذہبی شخصیت پروفیسر سید مظہر حسین گیلانی تھے جب کہ پروگرام کے میزبان سیاسی و سماجی شخصیت سید حسین شہید سرور ایڈووکیٹ تھے سیمینار میں ہاوس آف لارڈ کے رکن لارڈ قربان حسین، اہلسنت و الجماعت کے سیکرٹری جنرل علامہ قاضی عبدالعزیز چشتی، میر آف لوٹن کونسلر محمد ایوب، ال پارٹی کشمیر رابطہ کمیٹی کے صدر نزیر قریشی، جے کے ایل ایف کے مرکزی ترجمان پروفیسر ظفر خان سمیت مقامی کونسلروں، مساجد کے اماموں ڈاکٹروں اور پاکستانی اورکشمیری کیمونٹی کے افراد نے شرکت کیپروگرام سے خطاب کرتے ہوئے پیر علی رضا بخاری نے کہا کہ آزادی کے بیس کمیپ اور آزادکشمیر اسمبلی کے اندر اور باہر مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر تمام جماعتوں کا باہم مشرکہ ایک ہی موقف ہے کہ بھارت کشمیریوں پر ظلم کر رہا ہے جس کو رکوانے کیلئے ہم سب متحد ہیں اور آزادی کے بیس کیمپ کی طرح سے بیرونی ممالک میں آباد پاکستانی اور کشمیری ہر محاذ پر بھارت کی جانب سے روا رکھی جانے والی خلاف ورزیوں کی پر زور مزمت کرتے ہیں اور مقبوضہ کشمیر کے لوگوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہیں ان کا کہنا تھا آزادکشمیر کے اندر ریاستی جماعتیں کشمیریوں کا اپنا ایک علیحدہ تشخص اور شناخت ہے اور پاکستان کشمیریوں کی تحریک کا پشتی بان ہے پاکستان کے سابق وزیراعظم میاں محمد نواز شریف کی کشمیر کے ساتھ خاص دلچسپی ہے اسی تناظر میں انہوں نے آزادکشمیر کے گزشتہ چار سالوں میں 26 دورے کیے اور آزادکشمیر کا بجٹ بھی دگنا کر دیا ہم تعلیم روزگار اور دیگر شعبوں میں آگے تیزی سے بڑھ رہے ہیں انہوں نے سید حسین شہید کی کشمیر کے لئے خصوصی طور پر خدمات کو سراہا اور ان کا شکریہ بھی ادا کیا پروفیسر سید مظہر گیلانی نے اپنے خطاب کرتے میں کہا کہ کشمیریوں کے ساتھ پاکستان کی عوام کی ایک خاص کمٹنت ہے پاکستان میں بہنے والے دریا کشمیر سے آتے ہیں پاکستان ایک مضبوط تر ملک بننے جارہا ہے اور اس کے پاس دنیا کی بہترین فوج ہے جس قدر پاکستان مضبوط ہوگا کشمیر کے مسئلہ کو زیادہ بہتر انداز سے حل کرنے کی پوزیشن میں ہوگا انہوں نے دعویٰ کیا کہ پاکستان میں کوئی تفرقہ بازی نہیں ہے مزہب کے نام پر دھشت گردی ہو رہی ہے اور چونکہ پاکستان ایک اسلامی نظریاتی ملک ہے اسی لئے اس ملک کے طرح طرح کی سازشیں ہوتی ہیں اور اور اس کے دشمن اس کے ساتھ دشمنی اس لیے کررہے ہیں چونکہ ایک اسلامی ملک ہے جس کے پاس نیوکلیئر ٹیکنالوجی بھی موجود ہے پاکستان کی مخالفت اس کا اسلامی ہونے کی بنیاد پر ہورہی ہے لیکن ہمیں اپنے دین کی سربلندی اور ملک کی ترقی اور مفادات کی پاسداری کرنی ہے لارڈ قربان حسین نے کہا ہے کہ کشمیریوں کو جہاں ایک طرف باہم و اتحاد کی فضا برقرار رکھتے ہوئے آگے بڑھنا ہے وہاں کشمیری شناخت اور تشخص کو بھی قائم رکھنے کی طرف توجہ دینی ہے آزادکشمیر میں ریاستی جماعتوں مسلم کانفرنس اور لبریشن لیگ کو کمزور کرنے اور پاکستان کی سیاسی جماعتوں کوآزادکشمیر میں مضبوط کرنے سے کشمیری تشخص اور شناخت کو خطرات لاحق ہو گئے ہیں جس سے تحریک آزادی کو نقصان پہنچنے کا اندیشہ ہے انہوں نےمقبوضہ کشمیر کا بھی حوالہ دیا جہاں ہندوستان نے کشمیریوں کے تشخص کو ختم کرنے کے لئے ہندوستانی جماعتوں کو اقتدار میں لانے کی کوشش کی علامہ قاضی عبدالعزيز چشتی نے کہا کہ علماء کرام کشمیر کی آزادی کے لئے اہم رول ادا کرسکتے ہیں کشمیر علمائے کرام اور صوفیاء کرام کی تصور ہے نزیر قریشی کا کہنا تھا کہ سب کو مل جل کشمیر کی تحریک کو آگے بڑھانے کی ضرورت ہے میر اف لوٹن کونسلر محمد ایوب نے سب مہمانوں کو خوش آمدید کہا اور بتایا کہ وہ بحثیت میر ایک سال تک سیاسی گفتگو نہیں کرسکتے سید حسین شہید سرور نے اپنے خطاب میں کہا مقبوضہ کشمیر کے لوگوں کو ان کی جد وجہد آزادی میں اکیلا نہیں چھوڑ یں گے ہندوستان کے 70 سالہ تمام تر ظلم اور استبداد کے باوجود ہندوستان کشمیریوں کی آزادی کی تحریک کو ختم نہیں کرسکا اب نوجوانوں نے تحریک کو اپنے ہاتھوں میں لے لیا ہے جو حوصلہ افزا بات ہے پاکستان کشمیر کا بہترین وکیل ہے اپنے تمام تر مسائل کے باوجود پاکستان نے کشمیر پر سجھوتہ نہیں کیا مسلم لیگ آزادکشمیر کے قایم مقام صدر چوھدری جہانگیر ،کونسلر ریاض، مسلم کانفرنس کے شبیر ملک، مولانا اقبال اعوان، کونسلر راجہ وحید اکبر، کونسلر راجہ اسلم خان، کونلسر طاہر ملک، کونسلر محمود حسین، ،مولانا اعجاز احمد نقشبندی، رفیق ملک، ڈاکٹر یاسین الرحمن ،عابد گیلانی، ڈاکٹر طاہر لون، ڈاکٹر رضون بٹ، ڈاکٹر گل زمان، جے کے ایل ایف کے راجہ ممتاز راٹھور ، سابق کونسلر مسعود اختر، ڈاکٹر محمود شاہ، ڈاکٹر صفدر سعید اور دیگر درجنوں افراد نے خطاب کیا اور کشمیر کے مسئلے پر مل جل کر آگے بڑھننے کی ضرورت پر زور دیا ان رہنماؤں نے سید حیسن شہید کا شکریہ ادا کیا