مقبول خبریں
مکس مارشل آرٹ کونسل اور چیریٹی آرگنائزیشن کے زیر اہتمام تقریب کا انعقاد
بریگزیٹ بحران :کنزرویٹو پارٹی کی تین خواتین ممبر کی آزاد گروپ میں شمولیت
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
میئرآف لوٹن (برطانیہ) نے شاہد حسین سید کو کمیونٹی سروسز پر شیلڈ پیش کی
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
راجہ نجا بت حسین کی صدر آزاد کشمیر سردار مسعود اور وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر سے ملاقات
میں روشنی سے اندھیرے میں بات کرتا ہوں!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
سری نگر،قابض فورسز کا محرم کے جلوس پر وحشیانہ تشدد،بیسیوں عزادار زخمی
سری نگر:قابض بھارتی فوجیوں نے سرینگر میں محرم کے جلوسوں پر پابندیاں عائد کرتے ہوئے طاقت کا وحشیانہ استعمال کیا جس کے نتیجے میں بیسیوں عزادار زخمی ہو گئے ۔8محرم کے جلوس روکنے کیلئے سرینگر کے 8 تھانوں شہید گنج، کرن نگر، مائسمہ، کوٹھی باغ، شیر گری، کرالہ کھڈ، بٹہ مالو اور رام منشی باغ کی حدود میں آنے والے علاقوں میں سخت پابندیاں لگائی گئیں۔ادھر بھارتی پولیس نے محرم کے جلوس میں شرکت سے روکنے کیلئے جموںوکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین مک کو جمعہ کے روز سرینگر کے علاقے آبی گزر میں پارٹی دفتر پر چھاپے مار کر گرفتار کر لیا۔دریں اثنا بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں کشمیری نوجوان عبدالقیوم نجار کی شہادت پر ضلع بارہمولہ کے علاقے سوپور میں جمعہ کو مسلسل تیسرے روز بھی مکمل ہڑتال کی گئی۔ قصبے میں تمام دکانیں اور کاروباری مراکز بند رہے جبکہ سڑکوں پر ٹریفک معطل تھی۔کٹھ پتلی انتظامیہ نے احتجاجی مظاہروں کو روکنے کیلئے سوپور قصبے کے مرکزی چوک، تحصیل روڑ، بٹ پورہ چوک اور چھانکن کے علاقوں میں سخت پابندیاں نافذ کر دی تھیں۔ علاوہ ازیں قابض فورسز نے شوپیاں قصبے میں بھی پر امن مظاہرین کیخلاف طاقت کا وحشیانہ استعمال کیا ۔ قابض اہلکاروں نے لوگوں کے اندر خوف و ہراس پیداکرنے کیلئے شدید ہوائی فائرنگ بھی کی اور نوجوانوں کو وحشیانہ طریقے سے مارپیٹا۔ انہوں نے کوٹ روڑ اور اولڈ بس سٹینڈ کے علاقوں میں دکانداروں کے سامان کی بھی توڑ پھوڑ کی۔ عوتوں کے بال کاٹنے کے پر اسرار واقعات کے خلاف ضلع اسلام آباد کے علاقے وان پورہ میں لوگوں نے زبردست مظاہرے کیے ۔ کولگام کے علاقے چمر کے رہائشیوں نے میڈیا کو بتایا کہ انہوں نے بال کاٹنے والے ایک شخص کو پکڑلیا تھالیکن بھارتی فوجیوں نے بھاگنے میں اسکی مدد کی۔ ضلع پلوامہ میں بھارتی سنٹرل ریزروپولیس فورس کی E/110بٹالین سے وابستہ ہیڈ کانسٹیبل نے پامپور میں گرڈ سٹیشن پر تعیناتی کے دوران خود کشی کر لی جس سے مقبوضہ علاقے میں جنوری 2007سے خود کشی کرنے والے بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کی تعداد بڑھ کر387 ہو گئی۔دریں اثنا بھارتی تحقیقاتی ادارے ’’این آئی اے ‘‘نے کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی کے چھوٹے صاحبزادے ڈاکٹر نسیم گیلانی سے نئی دلی میں اپنے ہیڈکوارٹرمیں تین مرتبہ پوچھ گچھ کے بعد کلین چٹ دے دی۔البتہ این آئی اے نے کشمیر یونیورسٹی کے سکالر اعلیٰ فاضلی سے مسلسل چار روز تک نئی دلی میں اپنے ہیڈکوارٹر میں پوچھ گچھ کے بعد 3اکتوبر کو انہیں دوبارہ پیش ہونے کیلئے کہا ہے ۔