مقبول خبریں
راچڈیل مساجد کونسل کی طرف سے مئیر کونسلر محمد زمان کی مئیر چیرٹیز کیلئے فنڈ ریزنگ ڈنر کا اہتمام
اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی سیل بنایا جانا چاہئے: سلیم مانڈوی والا
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
برطانیہ میں آباد تارکین وطن کی مسئلہ کشمیر پر کاوشیں قابل تحسین ہیں:چوہدری محمد سرور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
کشمیریوں کو ان کا حق دیئے بغیر خطے میں پائیدار امن کا حصول ممکن نہیں: راجہ نجابت حسین
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
برطانیہ میں مقیم کشمیری و پاکستانی 16مارچ کو بھارت کے خلاف مظاہرہ کریں گے: راجہ نجابت حسین
وہ بے خبر تھا سمندر کی بے نیازی سے!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مس ترکی کی متنازع ٹویٹ سامنے آنے کے بعد اسے ٹائٹل سے محروم کر دیا گیا
انقرہ : غیر ملکی میڈیا کے مطابق عطر اسان نامی یہ 18 سالہ دوشیزہ کو گزشتہ دنوں ہی مس ترکی 2017ء کا خطاب دیا گیا تھا۔ تاہم جب مقابلے کا اہتمام کرانے والی کمیٹی کو علم معلوم ہوا کہ مس ترکی نے اپنی ایک سابقہ ٹویٹ میں صدر طیب اردوان کا تختہ الٹنے کی سازش کی حمایت کی تھی۔ مقابلہ حسن منعقد کرانے والی کمیٹی کے ڈائریکٹر جان صاندقجی اوگلو کا کہنا ہے کہ ہم دنیا بھر میں ترکی کی ساکھ کو مزید مضبوط بنانا چاہتے ہیں، ایسے پیغامات جن سے ترکی کی عالمی سطح پر شہرت کو نقصان پہنچے کسی صورت میں قابل قبول نہیں ہیں۔ترک حکام نے عطر اسان کی ٹویٹ کو ناکام انقلاب کے دوران جاں بحق ہونے والے شہریوں کے خون سے غداری اور ان کی قربانیوں کی توہین قرار دیا ہے۔ عطر سان کو چین میں ہونے والے ایک مقابلہ حسن میں ترکی کی نمائندگی کرنا تھی، مگر متنازع ٹویٹ نے نہ صرف اس کا مقامی سطح پر ملکہ حسن کا لقب چھین لیا بلکہ عالمی ملکہ حسن کے مقابلے میں حصہ لینے سے بھی محروم کر دیا۔