مقبول خبریں
آشٹن گروپ کی جانب سے پوٹھواری شعر و شاعری کی محفل،شعرا نے خوب داد وصول کی
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مس ترکی کی متنازع ٹویٹ سامنے آنے کے بعد اسے ٹائٹل سے محروم کر دیا گیا
انقرہ : غیر ملکی میڈیا کے مطابق عطر اسان نامی یہ 18 سالہ دوشیزہ کو گزشتہ دنوں ہی مس ترکی 2017ء کا خطاب دیا گیا تھا۔ تاہم جب مقابلے کا اہتمام کرانے والی کمیٹی کو علم معلوم ہوا کہ مس ترکی نے اپنی ایک سابقہ ٹویٹ میں صدر طیب اردوان کا تختہ الٹنے کی سازش کی حمایت کی تھی۔ مقابلہ حسن منعقد کرانے والی کمیٹی کے ڈائریکٹر جان صاندقجی اوگلو کا کہنا ہے کہ ہم دنیا بھر میں ترکی کی ساکھ کو مزید مضبوط بنانا چاہتے ہیں، ایسے پیغامات جن سے ترکی کی عالمی سطح پر شہرت کو نقصان پہنچے کسی صورت میں قابل قبول نہیں ہیں۔ترک حکام نے عطر اسان کی ٹویٹ کو ناکام انقلاب کے دوران جاں بحق ہونے والے شہریوں کے خون سے غداری اور ان کی قربانیوں کی توہین قرار دیا ہے۔ عطر سان کو چین میں ہونے والے ایک مقابلہ حسن میں ترکی کی نمائندگی کرنا تھی، مگر متنازع ٹویٹ نے نہ صرف اس کا مقامی سطح پر ملکہ حسن کا لقب چھین لیا بلکہ عالمی ملکہ حسن کے مقابلے میں حصہ لینے سے بھی محروم کر دیا۔