مقبول خبریں
اولڈہم ٹاؤن میں پہلی جنگ عظیم کی صد سالہ تقریب،جم میکمان،مئیر کونسلر جاوید اقبال و دیگر کی شرکت
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
فلپ بارٹن پاکستان میں برطانیہ کے نئے ہائی کمشنر ہونگے، جنوری 2014 میں ذمہ داری سنبھالیں گے
لندن ...فارن کامن ویلتھ آفس کی جانب سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ کہنہ مشق بیوروکریٹ فلپ بارٹن آیئندہ سال سے پاکستان میں برطانیہ کے نئے ہائی کمشنر ہونگے۔ وہ موجودہ ہائی کمشنر ایڈم تھامسن کی جگہ لیں گے۔ فلپ بارٹن نے 1986 میں برطانیہ کی وزارتِ خارجہ اور کامن ویلتھ آفس میں اپنی ملازمت کا آغاز کیا۔ پاکستان میں ہائی کمشنر کی تعیناتی سے پہلے وہ امریکہ میں ڈپٹی ہیڈ آف مشن کے طور پر کام کر رہے تھے۔ فلپ بارٹن سابق وزرائے اعظم ٹونی بلیئر اور جان میجر کے پرائیویٹ سیکریٹری کے طور پر خدمات سرانجام دے چکے ہیں۔اس کے علاوہ وہ جبرالٹر میں ڈپٹی گورنر کے فرائض انجام دینے کے ساتھ ساتھ یونانی قبرص اور وینزویلا میں ڈپٹی ہائی کمشنر کے طور پر بھی کام کر چکے ہیں۔ فلپ بارٹن نے ماضی میں ڈائریکٹر فارن پالیسی پاکستان اور افغانستان کے علاوہ جنوبی ایشیا سے متعلق مختلف عہدوں پر کام کیا ہے۔ فلپ بارٹن اس سے پہلے ایڈیشنل ڈائریکٹر آف ساؤتھ ایشیا کے عہدے پر کام کر چکے ہیں۔ وہ بھارت میں بھی تعینات رہے ہیں۔ پاکستان کے لیے ہائی کمشنر مقرر ہونے کے بعد فلپ بارٹن نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ پاکستان میں بطور ہائی کمشنر تعیناتی ان کے لیے اعزاز ہے۔ انہوں نے کہا کہ برطانیہ میں دس لاکھ پاکستانی دونوں ملکوں کے درمیان پل کی حیثیت رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ اپنی مدت ملازمت میں دونوں ملکوں کے مشترکہ مفادات کو آگے بڑھانے کی پوری کوشش کریں گے۔