مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
روہنگیا بحران کے خاتمے کیلئے آنگ سان سوچی کے پاس آخری موقع
نیویارک/ نیپیدو: برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق اقوام متحدہ نے خبردار کیا ہے کہ روہنگیا بحران کے خاتمے کیلئے میانمار کی رہنما آنگ سان سوچی کے پاس اب آخری موقع ہے۔ اگر انھوں نے فوری عمل نہیں کیا تو یہ سانحہ خوفناک رخ اختیار کر لے گا۔ بی بی سی کے مطابق اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اینتونیو گوتریز کا کہنا ہے کہ اگر سوچی نے حالات کا رخ نہ موڑا تو روہنگیا بحران بہت بھیانک ہو جائے گا اور بدقسمتی سے مستقبل میں اس کے بدلنے کا امکان بھی نظر نہیں آ رہا۔خیال رہے کہ میانمار کی فوج کے ظلم و جبر سے بھاگ کر بنگلا دیش آنے والے روہنگیا مسلمانوں کی تعداد 4 لاکھ تک پہنچ چکی ہے، جس میں گزرتے دن کے ساتھ اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے۔ پاکستان سمیت دنیا بھر میں آنگ سان سوچی پر سخت تنقید کی جا رہی ہے کہ وہ اس خراب ہوتی صورتحال کو درست کرنے میں ناکام رہی ہیں۔یو این سیکرٹری جنرل نے میانمار حکومت پر زور دیا کہ وہ بنگلا دیش جانے والے پناہ گزینوں کو واپس آنے کی اجازت دے۔ خیال رہے کہ میانمار کے آرمی چیف مِن آنگ لینگ نے اپنے ایک بیان میں کہا ہے کہ روہنگیا مسلمانوں کا ہمارے ملک سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ وہ صرف میانمار میں شناخت کے متلاشی ہیں اور یہ ممکن نہیں ہے کیونکہ یہ لوگ کبھی بھی اِس ملک کا نسلی گروپ نہیں رہے۔