مقبول خبریں
سیرت النبیؐ کے پیغام کو دنیا بھر میں پہنچانے کے لئے میڈیا کا کردار اہم ہے:پیر ابو احمد
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
لندن:ٹرین دھماکہ اور بیس افراد کا زخمی ہونا لمحہ فکریہ ہے :سیاسی،سماجی وکمیونٹی رہنما
مانچسٹر:دنیا بھر میں جاری دہشت گردی کی لہر اور بڑھتی ہوئی دہشت گردی عالمی امن کے لئے شدید خطرہ ہے،مذہب،رنگ و نسل اور علاقائی تعصبات اور دیگر عناصر کو بنیاد بنا کر موقع پرست قوتیں دنیا کا امن تباہ کرنے کے درپے ہیں،اب وقت کا تقاضا ہے کہ عالمی طاقتیں سنجیدگی کا مظاہرہ کرتے ہوئے ایسے عناصر جوان قوتوں کی مالی اور اخلاقی معاونت کرتی ہیں ذاتی مفادات کو بالائے طاق رکھتے ہوئے کیخلاف فیصلہ کن کارروائی کریں اور دنیا کے امن کو یقینی بنائیں،ایک مرتبہ پھر دنیا کے تجارتی شہر لندن کو دہشت گردی کا نشانہ بنایا گیا ہے اور زیر زمین ٹرین سٹیشن میں دھماکہ اور تقریباً بیس افراد کا زخمی ہونا سب کے لئے لمحہ فکریہ ہے ایسے مضموم عزائم کے پیچھے کار فرما کا کسی مذہب سے تعلق نہیں ہے بلکہ یہ انسانیت کے دشمن اور حیوانوں سے بھی بد تر ہیں،یہ باتیں اس افسوسناک واقعہ کے بعد سیاسی،سماجی،کمیونٹی اور مذہبی راہنمائوں چوہدری محمد بشیر،کونسلر عتیق الرحمن،راجہ آفتاب شریف،راجہ مقصود حسین،سید باسط شاہ،منور خان نیازی،حاجی امجد حسین مغل،چوہدری الطاف شاہد،چوہدری شبیر احمد بہملوی مشترکہ طور پر میڈیا نمائندگان سے فی الفور بات چیت کے دوران کیا،انہوں نے مزید کہا کہ برطانیہ بھر میں بسنے والے مسلمان امن پسند اور انسانیت کی خدمت کرنے والے ہیں،ہمارا مطالبہ ہے کہ اس واقعہ کی جلد از جلد تحقیقات کر کے اس میں ملوث افراد کو قرار واقعی سزا دی جائے،انہوں نے کمیونٹی سے کہا کہ وہ بھی اپنی صفوں کے اندر ایسے عناصر پر نظر رکھیں جو انسانیت کو نقصان پہنچانے کے درپے ہیں،اسلام میں شدت پسندی،دہشت گردی کی کوئی گنجائش نہیں ہے اور نہ ہی ایسے عناصر کا کوئی مذہب ہے۔خصوصی رپورٹ:فیاض بشیر