مقبول خبریں
ن لیگ برطانیہ و یورپ کا نواز شریف،مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزائیں معطل ہونے پر اظہار تشکر
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
جسٹس جواد ایس خواجہ کا پشاور کے علاقے کارخانو کا دورہ، نیٹو افواج کی اشیا خود بکتے دیکھیں
کراچی ... پاکستان کے اہم ترین ایشو کراچی میں امن و امان کی صورتحال کے بارے مقدمے کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ کے ایک بینج کے ممبر جسٹس جواد ایس خواجہ نے کہا ہے کہ وہ پشاور کے باہر واقع علاقے کارخانو گئے تھے جہاں ا نیٹو کا اسلحہ فروخت ہو رہا ہے۔ انہوں نے ایف بی آئی آر کے چیئرمین کو مشورہ دیا کہ وہ امریکی سفیر کو وہاں لے کر جائیں اور دکھائیں۔ نیٹو کے کنٹینروں کے لاپتہ ہونے سے متعلق پاکستان میں امریکی سفیر نے چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریوینیو کو ایک خط لکھا ہے جس میں امریکی سفیر نے واضح کیا ہے کہ نیٹو یا اتحادی افواج کے انیس ہزار کنیٹرز لاپتہ نہیں ہوئے ہیں اور اس حوالے سے اخبارات میں غلط خبریں شائع ہو رہی ہیں۔سپریم کورٹ جمعرات کو یہ فیصلہ کرے گی کہ پاکستان میں امریکی سفیر کو خط تحریر کیا جائے یا نہیں۔سپریم کورٹ کا بینج چیف جسٹس افتخار محمد چوہدری، جسٹس جواد ایس خواجہ اور جسٹس گلزار احمد پر مشتمل ہے۔ عدالت کو رمضان بھٹی کمیشن کی رپورٹ پڑھ کر سنائی گئی جس میں یہ بتایا گیا کہ امریکی سفیر نے چیئرمین فیڈرل بورڈ آف ریوینیو کو ایک خط لکھا ہے جس میں واضح کیا ہے کہ نیٹو یا اتحادی افواج کے انیس ہزار کنیٹرز لاپتہ نہیں ہوئے ہیں اور اس حوالے سے اخبارات میں غلط خبریں شائع ہو رہی ہیں۔ سفیر کا یہ بھی کہنا تھا کہ کراچی کی بندرگاہوں سے صرف سفارتی اور کھانے پینے کی اشیا برآمد کی جاتی ہیں اسلحہ نہیں لایا جاتا۔چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ بلوچستان اور وزیرستان میں جو جدید اسلحہ آ رہا ہے وہ کہاں سے آ رہا ہے؟ ہر ادارہ کہہ رہا ہے کہ سمندری راستے سے آ رہا ہے۔ اس موقعے پر چیف جسٹس نے شعیب سڈل اور حافظ انیس کمیشن کی رپورٹوں کا حوالہ دیا اور کہا کہ ان میں کہا گیا تھا کہ جدید اسلحہ کراچی کی بندرگاہوں سے داخل ہو رہا ہے۔اٹارنی جنرل نے نشاندہی کی کہ امریکی سفیر کے خط میں یہ لکھا ہے کہ کنٹینرز لاپتہ نہیں ہوئے تاہم ان میں موجود سامان کی کوئی بات نہیں کی گئی۔