مقبول خبریں
چیئرمین کشمیر کمیٹی سید فخر امام سے راجہ نجابت اورحریت رہنماء عبدالحمیدلون کی ملاقات
کرالے میں اوورسیزپاکستانیوں کی میٹنگ،مختلف طبقہ ہائے فکر کے افراد کی شرکت
دعوت اسلامی برمنگھم کے زیر اہتمام خراب موسم کے باوجودجشن عید میلاد النبیؐ کا جلوس
برطانوی شاہی جوڑے کی پاکستان میں زبردست پذیرائی، وزیر اعظم اور صدر مملکت سے ملاقاتیں
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سردار عتیق کی قیادت میں جدوجہد آزادی پایہ تکمیل تک پہنچائیں گے:رہنما ایم سی
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
مقبوضہ کشمیرمظالم:عالمی طاقتوں، اقوام متحدہ کو کردار ادا کرنا ہو گا : ڈاکٹر سجاد کریم
بلقیس بانو زندہ کیوں؟؟؟؟؟
پکچرگیلری
Advertisement
روہنگیا کے مسلمانوںپروحشیانہ مظالم مسلمانوں کیلئے لمحہ فکریہ ہے: ابو احمد محمد مقصود مدنی
اولڈہم:اسلام رواداری،صبر و تحمل،مساوات،عاجزی و انکساری کے ساتھ ساتھ دکھی انسانیت کا درس دیتا ہے،ہمارے پیارے نبی حضرت محمد ؐکی پوری زندگی ان واقعات سے بھری پڑی ہے اور درس اولین ہے کہ دوسرے مذاہب سے تعلق رکھنے والوں کے ساتھ اچھابرتائوکرو،برمامیں روہنگیا کے مسلمانوںپر ہونے والے وحشیانہ مظالم اور جس طرح لوگوں کو بے دردی سے ذبح کیا جارہا ہے پورے عالم اقوام اور بالخصوص مسلمانوں کے لئے لمحہ فکریہ ہے ایسے مناظر دیکھ کر راتوں کی نیندیں اڑ گئیں ہیں،محض مذہب کے نام پر مسلمانوں کی نسل کشی ناقابل برداشت ہے ہمیں اپنے سوئے ہوئے ضمیروں کو جگانا ہو گا اور سنجیدگی سے سوچنا ہو گا کہ اگر ان کی جگہ ہم ہوتے تو آیا کیا ہم اس ظلم و ستم کو برداشت کرتے یہ سب کچھ ریاست کے ایما پر ہو رہا ہے اور انسانی حقوق کے علمبردار خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں،یہ باتیں حضرت علامہ پیر طریقت،رہبر شریعت اہل سنت والجماعت کے داعی ابو احمد محمد مقصود مدنی نے پاکستان سے خصوصی طور پر ٹیلی فون کے ذریعے میڈیا نمائندگان سے کیں،انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت دنیا بھر میں مذہب اسلام سخت ترین آزمائشوں سے گزر رہا ہے اسکی بنیادی وجہ عالم اسلام کے راہنمائوں کے اندر اتفاق و اتحاد اور باہمی رابطہ اتنا مضبوط و مستحکم نہیں ہے اور وہ آپس میں لڑائی جھگڑے میں مصروف ہیں،عالم اسلام اور دنیا بھر کے علمائے کرام کی یہ ذمہ داری اورغرض ہے کہ وہ روہنگیا میں مسلمانوں پر ہونے والے مظالم بارے بھرپور احتجاج کرتے ہوئے عملی اقدامات اٹھائیں جس سے برما کے حکمرانوں پر سفارتی دبائو بڑھے اور یہ سلسلہ بند ہو ایسے میں بنگلہ دیش میں پناہ گزینوں کی اخلاقی،مالی و نفسیاتی مدد کیلئے عالم اقوام و اسلام کو بھرپور مدد کرنے کے لئے تمام تر وسائل کو بروئے کار لاناچاہئے،یاد رکھیں ایک انسان کا قتل پوری انسانیت کے قتل کرنے کے مترادف ہے اور کسی کی زندگی بچانا گویا تمام کی بچانے کے برابر ہے۔خصوصی رپورٹ:فیاض بشیر