مقبول خبریں
کشمیر میں مظالم کیخلاف اقدامات نہ اٹھائے تو تباہی کی ذمہ داری بین الاقوامی کمیونٹی پر ہو گی:نعیم الحق
ڈیبی ابراھم کی قیادت میں ممبران پارلیمنٹ اور کمیونٹی رہنماؤں کی لارڈ طارق احمد سے ملاقات
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز اورسیمینارز منعقد کریگی : راجہ نجابت
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کی وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر اور شاہ غلام قادر سے ملاقات
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
راجہ نجابت حسین کا مسئلہ کشمیر پر بحث میں حصہ لینے پر ارکان یورپی پارلیمنٹ کو خراج تحسین
سوچنے کے موسم میں سوچنا ضروری ہے!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
قومی سلامتی کمیٹی: ٹرمپ کا بیان مسترد، پاکستان میں دہشتگردوں کے ٹھکانے نہیں
اسلام آباد: وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی صدارت میں قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس پانچ گھنٹے تک جاری رہا۔ اجلاس میں عسکری قیادت نے بھی شرکت کی۔ قومی سلامتی کمیٹی نے قرار دیا کہ پاکستان نے دہشتگردی کیخلاف جنگ میں فرنٹ لائن سٹیٹ کا کردار ادا کیا اور دہشتگردی کیخلاف جنگ میں ہر ملک سے زیادہ قربانیاں دیں لیکن پاکستان کی قربانیوں کو نظرانداز کیا گیا۔قومی سلامتی کمیٹی نے ایک بار پھر باور کرایا کہ پاکستان اپنی سرزمین کسی دوسرے ملک کیخلاف استعمال کرنے کا مخالف ہے، پاکستان نے افغانستان میں قیام امن کی کوششوں کی ہمیشہ حمایت کی۔ اجلاس میں چین کی طرف سے پاکستان کی حمایت کا خیرمقدم کیا گیا۔قومی سلامتی کمیٹی کے اجلاس کے بعد جاری کردہ اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ پاکستان کیخلاف تمام الزامات یکسر مسترد کرتے ہیں، پاکستان کو قربانی کا بکرا بنانے سے امن نہیں ملے گا، افغانستان میں امن اور استحکام میں پاکستان کا اپنا مفاد پنہاں ہے تاہم، افغانستان میں دہشت گردوں کی پناہ گاہوں کے خلاف امریکہ کی مؤثر کارروائی دیکھنا چاہتے ہیں۔اعلامیے میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ افغانستان میں چھپے دہشتگرد اور شر پسند پاکستان میں دہشت گردی کے ذمہ دار ہیں، افغان جنگ پاکستان میں نہیں لڑی جا سکتی، افغان بحران میں پاکستان نے افغان بھائیوں کی مدد کی اور دہشتگردی کیخلاف جنگ میں ہزاروں جانوں کی قربانی دی۔اعلامیے میں واضح کیا گیا ہے کہ دہشت گردی کیخلاف جنگ کی وجہ سے پاکستانی معیشت کو 120 ارب ڈالر کا نقصان ہوا، پاکستان اپنی سرزمین کسی کے خلاف استعمال ہونے کی اجازت نہ دینے کے عزم پر کاربند ہے اور ہمسایہ ممالک سے بھی توقع رکھتا ہے کہ وہ اپنی سرزمین پاکستان کیخلاف استعمال نہ ہونے دیں۔قومی سلامتی کمیٹی نے اپنے اعلامیے میں یہ بھی کہا کہ پاکستان کو اربوں ڈالر امداد دیئے جانے کی باتیں غلط ہیں، پاکستان کی سالمیت اور خودمختاری پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا۔ادھر، وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نے دورہ سعودی عرب پر کمیٹی کو اعتماد میں لیا اور کہا کہ سعودی قیادت دہشتگردی کیخلاف پاکستان کی قربانیوں کی معترف ہے۔اس سے پہلے وزیر خارجہ خواجہ آصف نے ٹرمپ کے پالیسی بیان پر کمیٹی کو بریفنگ دی۔ ان کا کہنا تھا کہ دورہ امریکہ میں ڈونلڈ ٹرمپ کے بیان کا معاملہ اٹھایا جائے گا۔