مقبول خبریں
پاکستان میں صاف پانی کی سہولت کو ممکن بنانے کیلئے مختلف منصوبوں پر کام کرونگی:زارہ دین
پیپلزپارٹی کے رہنما ندیم اصغر کائرہ کی پریس کانفرنس ،صحافیوں کے سوالات کے جوابات دیئے
واجد خان ایم ای پی کا آزاد کشمیر سے آئے حریت کانفرنس کے رہنمائوں کے اعزاز میں عشائیہ
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
جموں و کشمیر تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے زیر اہتمام پہلی کشمیر کلچرل نمائش کا اہتمام
دسمبر بے رحم اتنا نہیں تھا!!!!!!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
شمالی کوریا کا بحرالکاہل میں امریکی جزیرے گوام کو میزائل سے نشانہ بنانے پر غور
پیانگ یانگ: صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی دھمکی کے بعد پیانگ یانگ نے امریکی فوجی اڈے کو نشانہ بنانے پر غور شروع کر دیا۔ شمالی کوریا کا کہنا ہے کہ وہ گوام میں قائم امریکی فوجی اڈے کو میزائلوں سے نشانہ بنا سکتا ہے۔ خیال رہے کہ گوام میں امریکا کے جنگی بمبار طیارے تعینات ہیں۔دوسری جانب امریکی سیکرٹری آف سٹیٹ ریکس ٹیلرسن نے اپنے ایک بیان میں صدر ٹرمپ کی جانب سے شمالی کوریا کو دی جانے والی دھمکی کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے کہ کم جانگ ان کو ڈپلومیٹک زبان سمجھ نہیں آتی، انھیں ایسا سخت پیغام دینے کی ضرورت تھی۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں شمالی کوریا سے فوری کوئی خطرہ درپیش نہیں ہے۔ صدر ٹرمپ صرف پیانگ یانگ پر یہ واضح کرنا چاہتے تھے کہ امریکا اپنا اور اپنے اتحادیوں کا دفاع بھرپور طریقے سے کرنا جانتا ہے۔گزشتہ روز امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے دھمکی دیتے ہوئے کہا تھا کہ شمالی کوریا کو آگ اور غصے کا سامنا کرنا ہو گا، جسے دنیا نے پہلے کبھی نہیں دیکھا ہو گا۔ اس سے قبل اقوام متحدہ نے شمالی کوریا پر مزید پابندیاں عائد کرنے کی قرارداد کو متفقہ طور پر تسلیم کیا تھا جس پر پیانگ یانگ نے اپنی خود مختاری کی متشدد خلاف ورزی سے تعبیر کرتے ہوئے امریکہ کو اس کی قیمت چکانے کی دھمکی دی تھی۔