مقبول خبریں
ن لیگ برطانیہ و یورپ کا نواز شریف،مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزائیں معطل ہونے پر اظہار تشکر
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
معروف برطانوی اخبارات غلط خبر چھاپنے پر مسلم لیگی رہنما ناصر بٹ سے تحریری معذرت پر رضامند
لندن برطانیہ میں میڈیا کی سرگرمیوں کی حدود پر نظر رکھنے والے ادارے پریس کمپلینٹس کمیشن کی مداخلت کے بعد معروف برطانوی اخبارات دی میل اور دی سن مسلم لیگ ن برطانیہ کے سینئر نائب صدر ناصر بٹ کے بارے میں لکھی گئی سٹوری میں غیر تصدیق شدہ باتیں لکھنے پر معذرت پر آمادہ ہو گئے ہیں، دونو ں اخبارات دکھ پہنچانے والی اور غیر مستند خبر شائع کرنے پر ناصر بٹ کے نام ایک معذرت نامہ شائع کریں گے ۔ تاہم کشمیر لنک لندن سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے ناصر بٹ کا کہنا تھا کہ جھوٹ پر مبنی سٹوری سے انہیں جو ذہنی صدمہ پہنچا اس کے ہرجانے کیلئے وہ دونوں اخبارات پر بڑی مالیت کا دعوا دائر کریں گے۔ گزشتہ سال اکتوبر میں اخبار دی سن نے ناصر بٹ کو دہرے قتل میں مورد الزام ٹھہرایا تھا اور اپنے اخبار کے پہلے صفحہ پر ان کی تصویر برطانوی ہوم سیکرٹری تھریسا مے اور وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے ساتھ شائع کی تھی۔ دی سن نے یہ سوال اٹھایا تھا ناصر بٹ کیسے حکومتی ایوانوں میں داخل ہوگئے تھے اور سینئرکیبنٹ وزیر سے ملنے والے دیگرافراد کی طرح ان کی چھان بین کیوں نہیں کی گئی تھی۔ اسکے ردعمل میں ناصر بٹ نے سن کے ساتھ ساتھ ڈیلی میل کے خلاف بھی قانونی کارروائی کا آغاز کردیا تھا، جس نے دی سن کی ویب سائٹ سے خبر کی نقل کی تھی۔ ناصر بٹ نے کہاکہ مذکورہ خبر اور اس کے نتیجہ میں ہونے والی کوریج شہرت کو انتہائی نقصان پہنچانے والے مواد پر مبنی ہیں اور وہ مسلسل پریشانی میں زندگی گزار رہے ہیں۔ناصر بٹ نے 1996 ء میں 2 بھائیوں کے قتل میں ملوث ہونے کی ہمیشہ تردید کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ان کے اپنے بھائی کے قتل کے بعد دونوں بھائیوں کے قتل کے واقعہ سے پہلے ہی وہ پاکستان چھوڑ چکے تھے۔ پریس کمپلینٹس کمیشن نے ناصر بٹ کو بتایا ہے کہ شکایت پر دونوں اخبارت نے مذکورہ آرٹیکلز اپنی ویب سائٹس سے ہٹالئے ہیں اوران کو دوبارہ شائع نہیں کیا جائے گا۔اخبارات نے تسلیم کیا کہ ان کی کوریج غیر مصدقہ تھی۔ ایک حقدار کو اس کا حق دلانے میں مدد دینے پر ناصر بٹ نے پریس کمپلینٹس کمیشن کا شکریہ ادا کیا ہے۔