مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مسلمان مرد سے تعلقات، غیرت کے نام پر اسرائیلی خاتون کو قتل کر دیا گیا
یروشلم: اسرائیل کی رہائشی ایک 17 سالہ لڑکی کو اس کے والد نے مسلمان مرد سے تعلقات کی وجہ سے قتل کر دیا ہے۔ مقتولہ مذہبی طور پر عیسائی تھی اور اسرائیل قصبے راملی کی رہائشی تھی۔ مقتولہ کے والد سیمی کیرا کو اپنی بیٹی کے مسلمان مرد سے ملاقاتوں اور تعلقات پر سخت اعتراض تھا۔اسرائیلی میڈیا کے مطابق مقتولہ ہینریتی کی والدہ نے پولیس کو دیے گئے اپنے بیان میں کہا ہے کہ اس کا شوہر بہت ذلت محسوس کر رہا تھا، اس لیے اس نے اپنی بیٹی کو قتل کرنے کا فیصلہ کیا۔ اس نے بتایا کہ ہم نے اور خاندان کے دیگر افراد نے بہت کوشش کی کہ ہماری بیٹی مسلمان مرد سے تعلق ختم کر دے لیکن وہ نہیں مانی۔ اس پر تھوڑی سختی کی گئی تو اس نے گھر بار چھوڑ دیا جس کے بعد اسے 13 جون کو قتل کر دیا گیا۔میڈیا کے مطابق گھر سے بھاگنے کے بعد ہینریتی نے مختلف جگہوں پر چھپ کر دن گزارے۔ اپنے قتل سے ایک ہفتہ قبل اس نے اپنے خاندان کے افراد کیخلاف پولیس کو درخواست دی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ اس کی فیملی نے اسے تشدد کا نشانہ بنایا۔وقت گزرتا رہا لیکن جیسے ہی مقتولہ ہینرتی نے اپنے ایک رشتہ دار کو بتایا کہ وہ اسلام قبول کرنے جا رہی ہے تو اس کا خاندان اور والد بڑھک اٹھے اور اسے قتل کرنے کا فیصلہ کر لیا۔ ہینرتی کی لاش اس کے گھر کے کچن سے ملی۔ پولیس نے سیمی کیخلاف مقدمہ درج کر کے معاملے کی تفتیش شروع کر دی ہے۔