مقبول خبریں
راچڈیل مساجد کونسل کی طرف سے مئیر کونسلر محمد زمان کی مئیر چیرٹیز کیلئے فنڈ ریزنگ ڈنر کا اہتمام
اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی سیل بنایا جانا چاہئے: سلیم مانڈوی والا
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
برطانیہ میں آباد تارکین وطن کی مسئلہ کشمیر پر کاوشیں قابل تحسین ہیں:چوہدری محمد سرور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
کشمیریوں کو ان کا حق دیئے بغیر خطے میں پائیدار امن کا حصول ممکن نہیں: راجہ نجابت حسین
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
برطانیہ میں مقیم کشمیری و پاکستانی 16مارچ کو بھارت کے خلاف مظاہرہ کریں گے: راجہ نجابت حسین
وہ بے خبر تھا سمندر کی بے نیازی سے!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
حریت کانفرنس کے سینئر راہنما محمود احمد کے بیان کا خیر مقدم کرتے ہیں:ڈاکٹر مسفر حسن
برنلے:جموں کشمیر نیشنل انڈیپینڈنس الائنس جناب محمود احمد ساغر جو حریت کانفرنس کے سینئر راہنما ہیں انکے اس بیان کا بھرپور خیر مقدم کرتی ہے جس میں انہوں نے حکومت پاکستان سے اس بات کا مطالبہ کیا ہے کہ حکومت آزاد کشمیر کو با اختیار اور پوری ریاست جموں کشمیر کے عوام کی نمائندہ حکومت تسلیم کیا جائے اس بات کا اعلان الائنس کے میڈیا ایڈوائزر ڈاکٹر مسفر حسن نے کیا،انہوں نے کہا کہ یکم جولائی کو الائنس کے چیئرمین جناب محمود کشمیری نے صدر آزاد کشمیر جناب مسعود خان سے بریڈ فورڈ میں یہ سوال اٹھایا تھا کہ ایکٹ74کی موجودگی میں انکی کوئی سیاسی حیثیت نہیں اور آج کی بین الاقوامی دنیا کے ساتھ اگر کشمیری قوم کو اپنی آزادی کی بات کرنا ہے تو اس کیلئے حکومت آزاد کشمیر کی سیاسی حیثیت کا تعین ہونا انتہائی ضروری ہے،ڈاکٹر مسفر حسن نے کہا کہ گزشتہ تیس سال کی تاریخ اس امر کی گواہ ہے کہ وادی کشمیر کے نوجوانوں نے اپنی آزادی کی خاطر بے شمار قربانیاں دی ہیں لیکن ان تمام قربانیوں کے باوجود کشمیریوں کی آزادی کی تحریک آگے نہیں بڑھی،انہوں نے کہا کہ دنیا کو قائل کرنے کیلئے اور جموں کشمیر کے عوام کے حق خود ارادیت کے حصول کی خاطر مظفر آباد حکومت کا با اختیار ہونا اشد ضروری ہے،انہوں نے کہا کہ آج دنیا بھر میں پر تشدد طریقوں کی مذمت کی جاتی ہے لیکن جموں کشمیر کی آزادی کی تحریک لیڈر کو دہشت گردی قرار دیا جانا غلط حکمت عملی کی نشاندہی ہی کرتا ہے جس پر غورکرنے اور نئی حکمت عملی اپنائے جانے کا احساس نہ کیا تو جموں کشمیر کے عوام کو اپنی آزادی اور حق خود ارادیت کے حصول کی خاطر دیگر ذرائع اور حکمت عملی پرغور کرنا پڑے گا،یاد رہے کہ جموں کشمیر انڈیپینڈنس الائنس ریاست جموں کشمیر کی وحدت،مکمل آزادی کیلئے سیاسی حکمت عملی پر یقین رکھتا ہے اور اس میں اس وقت،این اے پی،کشمیر فریڈم موومنٹ،یوکے پی این پی اور جموں کشمیر لبریشن لیگ برطانیہ شامل ہیں جبکہ دیگر کشمیری جماعتوں کے ساتھ نظریاتی جدو جہد کے حوالے سے بات چیت جاری ہے۔خصوصی رپورٹ:فیاض بشیر