مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
کے پی کے : بدعنوانی کے خاتمے کا عملی آغاز ، متاثرین کی عمران خان کو بد دعائیں، قوم کی دعائیں !!
پشاور ... ترقی پزیر ممالک میں کرپشن کا خاتمہ کتنا ممکن ہے اس بارے میں کوئی پاکستان کے صوبہ خیبر پختون خواہ کے وزیر اعلی سے پوچھے جنہوں نے ایک ایسے اقدام کی اجازت دے دی جس کے ردعمل میں وہ طوفان اٹھ کھڑا ہوا ہے کہ جس بارے میں انہوں نے سوچا نہ ہو گا۔ تفصیلات کے مطابق خیبر پختونخوا میں پولیس کے سربراہ ناصر خان درانی نے بدعنوانی کے الزام میں سو سے زائد پولیس اہلکاروں کو معطل کرکے ان کے خلاف کاروائی شروع کی ہے۔ یہ کاروائی پاکستان تحریک انصاف کا انتخابی نعرہ بھی تھا اور پارٹی کا موٹو بھی ہے، لیکن سو سے زائد پولیس اہلکاروں کی معطلی کا مطلب ہے کہ سو سے زائد خاندانوں نے جھولیاں اٹھا اٹھا کر ناصرف پی ٹی آئی کو بد دعائیں دینا شروع کر دی ہیں بلکہ ان کے لیڈر عمران خان کو بھی کوسنا شروع کر دیا ہے۔ پشاور میں آئی جی کے دفتر سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ خیبر پختونخوا پولیس کے معطل ہونے والے اہلکاروں میں پانچ انسپکٹر، چھ سب انسپکٹر، نو اسسٹنٹ سب انسپکٹر اور چار دیگر رینک کے اہلکار شامل ہیں۔ پولیس ذرائع کا یہ بھی کہنا ہے کہ حالات چاہے کیسے ہوں صوبے کے دیگر ریجنز میں تعینات بدعنوان اہلکاروں کی نشاندہی کرنے کےلیے تحقیقات جاری ہیں اور ابتدائی انکوائری مکمل ہونے کے بعد بہت جلد انہیں بھی معطل کردیا جائے گا۔