مقبول خبریں
راچڈیل مساجد کونسل کی طرف سے مئیر کونسلر محمد زمان کی مئیر چیرٹیز کیلئے فنڈ ریزنگ ڈنر کا اہتمام
اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی سیل بنایا جانا چاہئے: سلیم مانڈوی والا
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
برطانیہ میں آباد تارکین وطن کی مسئلہ کشمیر پر کاوشیں قابل تحسین ہیں:چوہدری محمد سرور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
کشمیریوں کو ان کا حق دیئے بغیر خطے میں پائیدار امن کا حصول ممکن نہیں: راجہ نجابت حسین
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
برطانیہ میں مقیم کشمیری و پاکستانی 16مارچ کو بھارت کے خلاف مظاہرہ کریں گے: راجہ نجابت حسین
وہ بے خبر تھا سمندر کی بے نیازی سے!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
اذان کو شور قرار دینا کسی طرح بھی صحیح نہیں ہے : بھارتی اداکارہ کالکی کوچلن
ممبئی : نامور بھارتی اداکارہ کالکی کوچلن نے کہا ہے کہ اذان کو شور قرار دینا صحیح نہیں ہے ، بھارت میں مختلف مذاہب کے لوگوں کی عبادت کرنے کا طریقہ الگ ہے ، کالکی نے شور کے نام سے ایک ویڈیو میں دکھایا ہے کہ بھارت میں لوگوں کو روزانہ کس قسم کی آوازوں کا سامنا رہتا ہے ۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق نامور بھارتی اداکارہ کالکی کوچلن نے اذان سے متعلق بیان دیتے ہوئے کہا ہے کہ اذان کو شور قرار دینا کسی طرح بھی صحیح نہیں ہے ۔گزشتہ کچھ عرصے سے بھارتی اداکاروں کی جانب سے اذان سے متعلق مختلف بیانات سامنے آرہے ہیں جن میں کئی اذان مخالف اور کئی اذان کی حمایت میں سامنے آئے ہیں ، اذان کی آواز سے متعلق تنازع بھارتی گلوکار سونونگم کے ٹوئٹس سے شروع ہوا جس میں انہوں نے اذان کو شور قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ آخر بھارت میں یہ جبری مذہب پرستی کب ختم ہو گی ، ان کے پیغامات نے بھارت سمیت دنیا بھر میں مقیم تمام مسلمانوں کے جذبات کو مجروح کر دیا تھا تاہم بعد میں انہیں اپنے بیانات پر معافی مانگنی پڑی تھی۔سونونگم کے بعد بھارتی فلم انڈسٹری سے تعلق رکھنے والے دیگر فنکاروں کی جانب سے بھی مختلف بیانات سامنے آئے اور اب ایک اور نامور اداکارہ کالکی کوچلن کا اذان سے متعلق بیان سامنے آیا ہے ۔ بھارتی میڈیا کے مطابق اداکارہ کالکی نے حال ہی میں شور کے نام سے ایک ویڈیو ریلیز کی ہے جس میں انہوں نے بتایا کہ بھارت میں رہنے والے لوگوں کو روزانہ کس قسم کی آوازوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے ، ویڈیو کی ابتدا میں کالکی اپنے آس پاس کے شور سے متعلق کہتی ہوئی نظر آرہی ہیں کہ وہ جس علاقے میں رہتی ہیں وہاں ہر وقت شور ہوتا رہتا ہے ، کیونکہ وہاں مسجد ، مندر ، چرچ ، مختلف اشیا فروخت کرنے والے لوگ اور بہت زیادہ ٹریفک ہوتا ہے جہاں سے ہر وقت شور کی آوازیں بلند ہوتی رہتی ہیں ۔کالکی نے مزید کہا کہ بھارت میں مختلف مذاہب سے تعلق رکھنے والے لوگ رہتے ہیں جن کی عبادت کرنے کا طریقہ الگ ہے ، کچھ لوگ مسجد ، کچھ چرچ اور کچھ مندر جاکر عبادت کرتے ہیں اور ان عبادت گاہوں میں مختلف طرح کی آوازیں ہر وقت سنائی دیتی رہتی ہیں ، اس کے علاوہ بھی ہمارے ارد گرد بہت سی آوازوں کا شور سنائی دیتا ہے ، جیسے موبائل فون کی آواز ، خبروں کی آواز ، مختلف موضوعات پر اپنی رائے دینے والے لوگوں کی آوازیں اور ہم ان تمام آوازوں کو بنا کوئی سوال کیے قبول کرلیتے ہیں ، لیکن ‘‘اذان’’ کی آواز کو بنیاد بنا کر اسے شور قرار دینا صحیح نہیں ہے ۔