مقبول خبریں
پاکستانی کمیونٹی سنٹر اولڈہم میں بیڈمنٹن ٹورنامنٹ کا انعقاد، برطانیہ بھر سے 20 ٹیموں کی شرکت
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر:رمضان میں اشیائے خورونوش کی قلت، کشمیری مسلمانوں کو مشکلات کاسامنا
سری نگر/نیویارک:حزب المجاہدین کے کمانڈرسبزاراحمدبھٹ اوردیگربے گناہ نوجوانوں کی شہادت کیخلاف مقبوضہ کشمیرمیں مسلسل چوتھے روزبھی مکمل ہڑتال اورزندگی مفلوج رہی۔کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق غاصب بھارتی فورسزکے انسانیت سوزمظالم کیخلاف احتجاجاًمقبوضہ وادی بھرمیں دکانیں،بازار، کاروباری وتجارتی مراکزاورتعلیمی ادارے مسلسل بندرہے جبکہ ٹریفک معطل اورسڑکیں سنسان تھیں،صرف قابض سکیورٹی اہلکارہی خالی شاہراہوں پردندناتے نظرآئے ،کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین سید علی گیلانی ، میر واعظ عمر فاروق اور شبیر احمد شاہ مسلسل گھروں میں جبکہ جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک سرینگر سنٹرل جیل میں نظربند ہیں،مسرت عالم بٹ ، آسیہ اندرابی اور فہمیدہ صوفی جموں جیل میں جبکہ انکے علاوہ بھی12کے قریب حریت رہنماگھروں یاتھانوں میں نظربندی گزاررہے ہیں،مسلسل کرفیواور دیگرسخت پابندیوں کے باعث لوگوں کی زندگی سخت تنگ ہوگئی،اشیائے خورونوش،ادویات،بچوں کے دودھ اورروزمرہ استعمال کی دیگرچیزوں کی شدیدقلت پیداہوگئی جس کے باعث رمضان المبارک میں کشمیری مسلمانوں کوکڑی مشکلات کاسامناہے ،گلی کوچوں اورچوراہوں سمیت ہرجگہ بھارتی سکیورٹی اہلکاروں کی بھاری نفری تعینات ہے جس کے باعث لوگوں کاگھروں سے نکلناناممکن بن کررہ گیاجبکہ غذائی اجناس کی کمی سے فاقہ کشی کی نوبت آگئی، پوری وادی میں موبائل فون ا ورانٹرنیٹ سروسز بھی مسلسل معطل ہے ،لوگ آپس میں رابطہ نہیں کرپارہے ،تعلیمی ادارے مسلسل بندہونے سے طلبہ کے مستقبل داؤپرلگے ہیں،ہرسمت بس بے یقینی اور بے چینی کی سی بحرانی صورتحال ہے ،مقبوضہ وادی میں آنیوالے سیاح بھی مخدوش حالات کے پیش نظرواپس لوٹ گئے ،5روزقبل سیاحوں سے بھرے ہوٹلوں میں اب ہْوکاعالم ہے ،اب تک غیرملکیوں سمیت10ہزارکے قریب سیاحوں نے اپنی بکنگ منسوخ کردی۔دریں اثنا سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق اوریاسین ملک پر مشتمل مشترکہ مزاحمتی قیادت نے ’ترال چلو‘پروگرام ناکام بنانے کیلئے کٹھ پتلی انتظامیہ کے ہتھکنڈوں کی سخت مذمت کرتے ہوئے کہاکہ کشمیریوں کو قابض بھارتی فوج کے ہاتھوں اپنے نوجوانوں کے بے دریغ قتل عام کیخلاف احتجاج کی بھی اجازت نہیں دی جارہی۔مشترکہ بیان میں انکاکہناتھاکہ بھارت مقبوضہ علاقے میں ریاستی دہشتگردی کا جو بدترین مظاہرہ کررہا ہے اسکی مثال دنیا کے کسی اور خطے میں نہیں ملتی،پُرامن جلسے ، جلوسوں اوردیگر سیاسی سرگرمیوں پرپابندیوں کے ذریعے صوتحال کو بد سے بدتر بنایا جار ہا ہے ،تاہم بھارت کواوچھے ہتھکنڈوں سے ماضی میں کچھ حاصل ہوسکانہ مستقبل میں کچھ حاصل ہوگا۔ادھر سرینگرمیں کشمیر ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن نے بھارتی جبرکیخلاف احتجاجاً عدالتی کارروائی کا بائیکاٹ کیا،وکلاء کی ہڑتال کی وجہ سے ہائیکورٹ اور دیگر عدالتوں میں کام بری طرح متاثرہواجبکہ ہائیکورٹ بارکی مذمتی قرارداد میں کہاگیاکہ حق پرمبنی جدوجہدآزادی جاری رہے گی۔علاوہ ازیں ضلع پلوامہ کے علاقہ دالی پورہ میں پراسراردھماکہ سے 45سالہ غلام محی الدین شاہ زخمی گیاجبکہ بارہمولہ کے علاقہ خان پورہ میں نامعلوم مسلح افراد نے ایک شہری عبدالرشید کو اس وقت گولی مارکر زخمی کردیا جب وہ مسجد سے گھر واپس آرہا تھا۔دوسری جانب انسانی حقوق کے امریکی ادارہ’ہیومن رائٹس واچ‘کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر کینیتھ روتھ نے کشمیریوں کو ڈھال کے طور پر استعمال کرنے سے متعلق بھارتی آرمی چیف کے بیان کی سخت مذمت کی،انکاکہناتھاکہ جنرل بپن راوت کابیان انکی مجرمانہ ذہنیت کو ظاہر کر تاہے ۔یاد رہے کہ بھارتی آرمی چیف نے کشمیریوں کے پتھراؤ سے بچنے کیلئے ایک نوجوان کو گاڑی کے آگے باندھ کرگشت کرنیوالے میجر کو نہ صرف اعزازی تمغہ دیا بلکہ اس اقدام کو جائز قراردیتے ہوئے یہ تک کہا کہ’اس اقدام سے بھارتی فوجیوں کا مورال برقرار رکھنے میں مدد ملے گی ۔