مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
برطانوی مسلمانوں کے فلاحی کاموں، ان کے ایثاراورعشق الہی کا معترف ہوں: ڈیوڈ کیمرون
لندن ... برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون نے عید الاضحے کی نسبت سے برطانیہ کے مختلف شعبہ جات میں کام کرنے والے مسلم پروفیشنلز کے اعزاز میں عید ملن تقریب کا اہتمام کیا۔ اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ میں برطانیہ کے تقریبا تیس لاکھ مسلمانوں کے فلاحی کاموں، ان کے ایثاراورعشق الہی کا معترف ہوں۔ میں سمجھتا ہوں کہ ہمارا ملک عقائداورمذاہب کے حامل افراد کی وجہ سے بہت مستحکم تر ہے۔ برطانیہ کے مسلمان، مسیحی، یہودی، سکھ اور ہندو،ان کے ادارے اوران کی اقدارہمیں استحکام عطا کرتی ہیں۔ انہوں نے کہا اب جبکہ سال ختم ہونے کے قریب ہےہمیں ملک کے لئے برطانوی مسلمان کمیونٹیز کے غیرمعمولی اورمسلسل کردارکی یاد دہانی ہوتی ہے۔اس سال میری ملاقات مسلم کاروباری مرد وخواتین، تاجروں،مذہبی رہنماؤں، سرکاری ملازمین اورمحنت کش خاندانوں سے ہوئی، وہ اوردوسرے متعدد افراد ہمارے ملک کے لئے ایک اہم کردارادا کرتے ہیں اورمیں ایک ایسی قوم کا وزیر اعظم ہونے پر فخرمحسوس کرتا ہوں جہاں تمام پس ہائے منظراورعقائد کے حامل افراد اپنے عقائدپرآزادی سے عمل کرتے ہوئےہمارے مستقبل میں حصے دار ہو سکتے ہیں۔ برٹش وزیر اعظم نے کہا نئے سال کے ساتھ مسلمانوں اور ان دیگر افراد کے لئے امید تازہ ہورہی ہے جو ہماری دنیا میں مصائب کا شکار ہیں۔ مجھے خوشی ہے کہ برطانوی حکومت اپنی کل قومی آمدنی کے 7.فی صد سےدنیا کے غریب ترین افراد کی مدد کے لئے سرمایہ کاری کرنے کا اپنا وعدہ پوراکررہی ہے۔ میں شکرادا کرتا ہوں کہ بیرون ملک ضرورتمندوں کی مدد کے لئے ہم مسلم اوردیگر تنظیموں کے ساتھ شراکت کرسکے ہیں۔ اس موقع پر وزیر اعظم حاجرین میں گھل مل گئے اور ان سے باتیں کیں۔ اس سال خاص طور پر برٹش فورسز میں کام کرنے والے افراد کو بھی ندعو کیا گیا تھا یا قابل ذکر تعداد آل پارٹی پارلیمانی گروپ آن پاکستان کے چیئرمین انڈریو اسٹیفنسن کے حلقے کے لوگوں کی تھی۔