مقبول خبریں
یوم عاشور کے حوالہ سے نگینہ جامع مسجد اولڈہم میں روح پرور،ایمان افروز محفل کا اہتمام
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر کی حکمران جماعت کا رہنماء قتل، حالات کشیدہ ، شدید لاٹھی چارج
سرینگر: مقبوضہ کشمیر میں طلبہ ایک بار پھر سڑکوں پر نکل آئے۔ کشیدگی کے باعث کئی دن بند رہنے کے بعد تعلیمی ادارے آج کھل گئے تھے۔ ایس پی ہائیر سیکنڈری سکول کے طلبہ نے بھارتی مظالم کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے کلاس میں بیٹھنے سے انکار کر دیا۔ سکول کے طلبہ نے مولانا آزاد روڈ کی جانب مارچ کیا تو پولیس روکنے کے لیے پہنچ گئی۔ اس دوران جھڑپوں میں درجنوں طالب علم زخمی ہو گئے۔ دوسری جانب گورنمنٹ ڈگری کالج فار گرلز کی طالبات بھی مولانا آزاد روڈ پہنچ گئیں اور آزادی کے حق میں نعرے بلند کیے۔ مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے پولیس نے شدید لاٹھی چارج اور آنسو گیس کی شیلنگ کی۔ قابض افواج نے مزید کشیدگی کے پیش نظر سرینگر کا لال چوک رکاوٹیں لگا کر بند کر دیا۔دوسری جانب مقبوضہ کشمیر کے ضلع پلوامہ میں حکمران جماعت پی ڈی پی کے مقامی رہنماء عبد الغنی ڈار کو نامعلوم افراد نے گولی مار کر ہلاک کر دیا۔ واقعے کے بعد وادی کی صورتحال مزید کشیدی پیدا ہو گئی۔ یہ واقعہ نئی دہلی میں وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی کی انڈین وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ ملاقات کے فوراً بعد پیش آیا جس میں محبوبہ نے مودی کے ساتھ کشمیر کی صورت حال پر تبادلہ خیال کیا۔ ابھی تک کسی نےعبدالغنی ڈار کے قتل کی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے۔