مقبول خبریں
برطانوی معاشرے میں رہتے ہوئے تمام تہوار میں حصہ لینا چاہئے: افضل خان
سپینش شہریت کے حامل سائنسدانوں کی قدرتی آفات پر ریسرچ
پاکستان میں فٹبال کے فروغ کیلئے انٹرنیشنل سوکا فیڈریشن کا قیام، ٹرنک والا فیملی کو خراج تحسین
چیئر مین پی ٹی آئی عمران خان تیسری بار دلہا بن گئے، بشریٰ بی بی سے نکاح ہو گیا
بھارتی ریاستی دہشتگردی کیخلاف مقبوضہ کشمیر میں ہڑتال، تعلیمی ادارے بند
کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی پامالیوں کو رکوانے کے سلسلہ میں پروگرام کا انعقاد
اوورسیز پاکستانیز ویلفیر کونسل کے زیراہتمام یوم یکجہتی کشمیر پر کار ریلی کا انعقاد
راجہ نجابت اور ان کی ٹیم کامسئلہ کشمیرپر متحرک کردار قابل ستائش ہے: سٹوورٹ اینڈریو
کیا یورپ ٹوٹ رہا ہے ؟
پکچرگیلری
Advertisement
پیرمحمد علائوالدین صدیقی نے رسولؐ کے اسوہ حسنہ کے مطابق دین کی خدمت کی:علماکرام
برمنگھم:عالم اسلام ، باالخصوص پاکستان اور برطانیہ میں قائد تحریک تحفظ ناموس رسالت و عظیم روحانی پیشوا آستانہ عالیہ نیریاں شریف کے سجادہ نشین پیر علاو الدین صدیقی کی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا ان خیالات کا اظہار مرکزی جماعت اہلسُنت یو کے اینڈ اوورسیز (رجسٹرڈ ) کے مرکزی صدر علامہ احمد نثاربیگ قادری، جنرل سیکرٹری علامہ حافظ مُفتی فضل احمد قادری، علامہ حافظ نثار احمد رضا، اور علامہ محمد ظفر محمود فراشوی نے آستانہ عالیہ نیریاں شریف برمنگھم میں صاحبزادہ پیر ظہیر الدین صدیقی سے پیر علاوالدین صدیقی کی وفات پر اظہار تعزیت کرتے ہوئے کیا۔ علماء اور مشائخ کے نمائندہ وفد نے کہا کہ پیرمحمد علاوالدین صدیقی نے ساری زندگی اللہ اور رسولؐ کے اسوہ حسنہ کو اپناتے ہوئے دین کی خدمت کی اور اُن کے تحفظ ناموس رسالت کی تحریک ایک عظیم کارنامہ ہے ،انہوں نے کہا نور ٹی وی سے لیکر محی الدین ٹرسٹ ،بین الاقوامی معیار کی یونیورسٹی آزاد کشمیر میں قائم کرنا اور میرپور میںمیڈکل کالج آج ہزراوں لوگ ان سے مستفید ہو رہے ہیں اور کہا کہ پیر محمدعلاوالدین صدیقی کا علمی اور تعلیمی انقلاب ایک سنہری باب اورجو روشن مینار ہے ، اس موقع پر صاحبزادہ پیر ظہیر الدین صدیقی نے علماء اور مشائخ کو یقین دلایا کہ پیر علاوالدین صدیقی کی جلائی ہوئی شمع کو مزید روشن کریں گئے اور اس عظیم کارنامے اور مشن کو جاری رکھیں گے،جس پرعلماء اور مشائخ کے چار رُکنی وفد نے اُنکی حمایت کی اور اپنے تعاون کی یقین دہانی کروائی آخر میں پیر علاوالدین صدیقی کے درجات بلندی کے لیے خصوصی دُعا بھی کی۔