مقبول خبریں
کاروباری شخصیات سید اسد علی ،احمد رضا کی مئیر کونسلر محمد زمان سے ملاقات،مختلف امور پر تبادلہ خیال
اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی سیل بنایا جانا چاہئے: سلیم مانڈوی والا
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
برطانیہ میں آباد تارکین وطن کی مسئلہ کشمیر پر کاوشیں قابل تحسین ہیں:چوہدری محمد سرور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
کشمیریوں کو ان کا حق دیئے بغیر خطے میں پائیدار امن کا حصول ممکن نہیں: راجہ نجابت حسین
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
برطانیہ میں مقیم کشمیری و پاکستانی 16مارچ کو بھارت کے خلاف مظاہرہ کریں گے: راجہ نجابت حسین
وہ بے خبر تھا سمندر کی بے نیازی سے!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
چینی بزنس مارکیٹ شفافیت میں فقدان کا شکار ہے: ٹرانسپیرینسی انٹرنیشنل کی رپورٹ
برلن ...دنیا بھر میں شفافیت کو یقینی بنانے اور بدعنوانی کی نشاندہی کرنے والی عالمی تنظیم ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل مے انکشاف کیا ہے کہ چین عالمی منڈی میں غفلت کی حد تک بدعنوانیوں کا مرتکب ہو رہا ہے۔ برلن میں واقع تحقیقی ادارے نے دنیا کے 16بڑے اور مصروف ممالک میں کام کرنے والی 100ملٹی نیشنل کمپنیوں کے بارے میں کی جس میں یہ بات سامنے آئی کہ چین ہر شعبے میں انتہائی نرم رویئے کا حامل ہے جس سے شفافیت متاثر ہو رہی ہے۔ ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل نے چینی کمپنیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی کارکردگی اور کاروباری مصروفیات میں شفافیت کا فقدان ہے۔ برلن سے موصولہ رپورٹوں کے مطابق یہ بات ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کے ایک ایسے نئے سروے کے نتیجے میں سامنے آئی ہے، جس میں ابھرتے ہوئے ملٹی نیشنل اداروں کی کارکردگی کا جائزہ لیا گیا ہے۔ اس جائزے میں بتایا گیا کہ بھارتی کمپنیوں کی کارکردگی بہتر ہوئی ہے اور وہ کرپشن کے خلاف نسبتاً اعلیٰ معیار اپنا رہی ہیں۔ 55 صفحات پر مشتمل تفصیلی رپورٹ کے مطابق ابھرتی ہوئی بڑی معیشتوں کے پانچ رکنی گروپ بِرکس میں برازیل، روس، بھارت، چین اور جنوبی افریقہ شامل ہیں۔ اسی رپورٹ کے مطابق گین کے فنگ گروپ اور چیری آٹو موبائل نے معیار کے حوالے سے صفر سکور حاصل کیا۔ واضع رہے کہ تحقیق کیلئے ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل کی اپنی پالیسی ہے جس پر کسی بھی کمپنی کو اعتراض کا پورا حق حاصل ہوتا ہے۔