مقبول خبریں
روٹری کلب کے راہنما ڈاکٹر سہیل قریشی کے اعزاز میں سماجی کمیونٹی شخصیت چوہدری محمود کا استقبالیہ
پاکستان سے آئے وکلا کے اعزاز میں ورلڈ وائیڈ سالیسٹرز کے ڈائیریکٹر محمد اشفاق کا استقبالیہ
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
سابق صدر پی ٹی آئی یارکشائر اینڈ ہمبر ریجن طاہر ایوب خواجہ کا اپنی رہائش گاہ پر محفل کا انعقاد
بے نظیر بھٹو: چراغ بجھ گیا لیکن روشنی زندہ ہے
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر:بھارتی فوج کی بربریت،2کشمیری شہید،حملے میں پولیس اہلکار ہلاک
سرینگر:مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں نے ریاستی دہشت گردی کی تازہ کارروائی کے دوران ضلع پلوامہ میں دو کشمیری نوجوان شہید کر دئیے جبکہ حملے میں ایک بھارتی پولیس اہلکار ہلاک ہوگیا اور میجر سمیت متعدد فوجی زخمی ہوئے ۔تفصیلات کے مطابق بھارتی فوجیوں نے 2 نوجوانوں کو ضلع پلوامہ کے علاقے ترال میں ہافو نازنین پورہ کے مقام پر ایک پر تشدد فوجی کارروائی کے دوران شہید کیا۔ بھارتی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ شہید ہونے والے نوجوان عسکریت پسند تھے جو ایک جھڑپ میں مارے گئے ۔قبل ازیں اسی علاقے میں ایک حملے کے دوران ایک بھارتی پولیس اہلکار ہلاک جبکہ میجر سمیت متعدد بھارتی فوجی زخمی ہو گئے تھے ۔ علاقے کے رہائشیوں نے میڈیا کو بتایا کہ قابض فوجیوں نے علاقے میں ایک رہائشی مکان گولہ باری کر کے مسمار کر دیا جس کے ملبے سے دونوجوانوں کی لاشیں برآمد ہوئیں۔نوجوانوں کی شہادت پر ترال میں زبردست مظاہرے پھوٹ پڑے ، لوگ کرفیو کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے اپنے گھروں سے باہر نکل آئے اور بھارت کے خلاف اور آزادی کے حق میں نعرے لگائے ۔ قابض بھارتی فورسز نے مظاہرین کے خلاف طاقت کا وحشیانہ استعمال کیا جس کے باعث متعدد افراد زخمی ہو گئے ۔ ادھر بھارتی فوج کے ایک اہلکار روشن سنگھ نے نے ضلع پونچھ کے علاقے لوئر کرشنا گھاٹی میں اپنی سروس رائفل سے خود کشی کر لی۔ خود کشی کے اس تازہ واقعے سے جنوری 2007سے مقبوضہ کشمیر میں خود کشی کرنے والے بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کی تعداد بڑھ کر 379ہو گئی۔سوپور قصبے کے گائوں پزل پورہ ہردہ شوہ میں بھارتی فوج کے کیمپ کے نزدیک ایک پر اسرار دھماکے میں تین کشمیری نوجوان زخمی ہو گئے ۔مقامی افراد نے میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ یہ نوجوان کیمپ کے نزیک ایک نالے سے گزر رہے تھے کہ ایک نوجوان کا پائوں ایک ان پھٹے گولے پر لگااور دھماکے کے نتیجے میں وہ اور اسکے دو ساتھی زخمی ہو گئے ۔ زخمیوں کی شناخت ساحل رشیدلون، آکاش ریاض بٹ اور شاکر حسین ڈار کے طور پر ہوئی ہے ۔ ضلع کولگام میں آمنو نامی علاقے کے کیمپ سے وابستہ سپیشل آپرشن گروپ کے اہلکاروں نے ٹی پی برانچ کولگام کے قرب ایک بہن بھائی کوحراست میں لے لیا جس کے خلاف علاقے کے لوگ سڑکوں پر آگئے اور زبردست مظاہرے کیے ۔ بھارتی فورسز اہلکاروں نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس کی شدید شیلنگ کی جس سے متعدد افراد زخمی ہو گئے ۔ لوگوں کے زبردست احتجاج کے بعد قابض اہلکار لڑکی کورہا کرنے پر مجبور ہوئے تاہم لڑکا تاحال ان کی حراست میں ہے ۔ مقبوضہ کشمیر میں تحریک حریت جموںو کشمیر نے ضلع پلوامہ کے علاقوں رتنی پورہ اور کاکہ پورہ میں 22نوجوانوں کو گرفتار کرنے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ بھارتی حکمرانوں کو خوف ودہشت کا ماحول قائم کرنے کے بجائے نوشتہ دیوار پڑھ لینا چاہیے اور مسئلہ کشمیر کو اپنے تاریخی پسِ منظر میں حل کرنے کے لیے اقدامات اٹھانے چاہیے ۔