مقبول خبریں
مدر فائونڈیشن گوجرخان کے روح رواں راجہ عرفان کی برطانیہ آمد پر انکے اعزاز میں استقبالیہ
ماحولیاتی آلودگی کے باعث بچہ ماں کے رحم میں مر جاتا ہے یا اسکی افزائش رک جاتی ہے: ایک تحقیق
پاک سر زمین پارٹی کے مرکزی جوائنٹ سیکرٹری محمد رضا کی زیر صدارت عہدیداران و کارکنان کا اجلاس
برطانوی شاہی جوڑے کی پاکستان میں زبردست پذیرائی، وزیر اعظم اور صدر مملکت سے ملاقاتیں
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
حلقہ ِ ارباب ِ ذوق کے ادبی پروگرام میں پاکستانیوں اور کشمیری کونسلرز کی بڑی تعداد میں شرکت
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
پروفیٹک گفٹس ویڈنگ اینڈ ایونٹس آرگنائزر کے زیر اہتمام ایشین ویڈنگ اینڈ پلانرز ایونٹ کا انعقاد
میرے تمام خواب نظاروں سے جل گئے
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر:بھارتی فوج کی بربریت،2کشمیری شہید،حملے میں پولیس اہلکار ہلاک
سرینگر:مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں نے ریاستی دہشت گردی کی تازہ کارروائی کے دوران ضلع پلوامہ میں دو کشمیری نوجوان شہید کر دئیے جبکہ حملے میں ایک بھارتی پولیس اہلکار ہلاک ہوگیا اور میجر سمیت متعدد فوجی زخمی ہوئے ۔تفصیلات کے مطابق بھارتی فوجیوں نے 2 نوجوانوں کو ضلع پلوامہ کے علاقے ترال میں ہافو نازنین پورہ کے مقام پر ایک پر تشدد فوجی کارروائی کے دوران شہید کیا۔ بھارتی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ شہید ہونے والے نوجوان عسکریت پسند تھے جو ایک جھڑپ میں مارے گئے ۔قبل ازیں اسی علاقے میں ایک حملے کے دوران ایک بھارتی پولیس اہلکار ہلاک جبکہ میجر سمیت متعدد بھارتی فوجی زخمی ہو گئے تھے ۔ علاقے کے رہائشیوں نے میڈیا کو بتایا کہ قابض فوجیوں نے علاقے میں ایک رہائشی مکان گولہ باری کر کے مسمار کر دیا جس کے ملبے سے دونوجوانوں کی لاشیں برآمد ہوئیں۔نوجوانوں کی شہادت پر ترال میں زبردست مظاہرے پھوٹ پڑے ، لوگ کرفیو کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے اپنے گھروں سے باہر نکل آئے اور بھارت کے خلاف اور آزادی کے حق میں نعرے لگائے ۔ قابض بھارتی فورسز نے مظاہرین کے خلاف طاقت کا وحشیانہ استعمال کیا جس کے باعث متعدد افراد زخمی ہو گئے ۔ ادھر بھارتی فوج کے ایک اہلکار روشن سنگھ نے نے ضلع پونچھ کے علاقے لوئر کرشنا گھاٹی میں اپنی سروس رائفل سے خود کشی کر لی۔ خود کشی کے اس تازہ واقعے سے جنوری 2007سے مقبوضہ کشمیر میں خود کشی کرنے والے بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں کی تعداد بڑھ کر 379ہو گئی۔سوپور قصبے کے گائوں پزل پورہ ہردہ شوہ میں بھارتی فوج کے کیمپ کے نزدیک ایک پر اسرار دھماکے میں تین کشمیری نوجوان زخمی ہو گئے ۔مقامی افراد نے میڈیا کے نمائندوں کو بتایا کہ یہ نوجوان کیمپ کے نزیک ایک نالے سے گزر رہے تھے کہ ایک نوجوان کا پائوں ایک ان پھٹے گولے پر لگااور دھماکے کے نتیجے میں وہ اور اسکے دو ساتھی زخمی ہو گئے ۔ زخمیوں کی شناخت ساحل رشیدلون، آکاش ریاض بٹ اور شاکر حسین ڈار کے طور پر ہوئی ہے ۔ ضلع کولگام میں آمنو نامی علاقے کے کیمپ سے وابستہ سپیشل آپرشن گروپ کے اہلکاروں نے ٹی پی برانچ کولگام کے قرب ایک بہن بھائی کوحراست میں لے لیا جس کے خلاف علاقے کے لوگ سڑکوں پر آگئے اور زبردست مظاہرے کیے ۔ بھارتی فورسز اہلکاروں نے مظاہرین کو منتشر کرنے کے لیے آنسو گیس کی شدید شیلنگ کی جس سے متعدد افراد زخمی ہو گئے ۔ لوگوں کے زبردست احتجاج کے بعد قابض اہلکار لڑکی کورہا کرنے پر مجبور ہوئے تاہم لڑکا تاحال ان کی حراست میں ہے ۔ مقبوضہ کشمیر میں تحریک حریت جموںو کشمیر نے ضلع پلوامہ کے علاقوں رتنی پورہ اور کاکہ پورہ میں 22نوجوانوں کو گرفتار کرنے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ بھارتی حکمرانوں کو خوف ودہشت کا ماحول قائم کرنے کے بجائے نوشتہ دیوار پڑھ لینا چاہیے اور مسئلہ کشمیر کو اپنے تاریخی پسِ منظر میں حل کرنے کے لیے اقدامات اٹھانے چاہیے ۔