مقبول خبریں
مقبوضہ کشمیر کےعوام کو بھارتی چنگل سےنجات دلانے کیلئے برطانوی حکومت کردار ادا کرے:راجہ نجابت
ڈیبی ابراھم کی قیادت میں ممبران پارلیمنٹ اور کمیونٹی رہنماؤں کی لارڈ طارق احمد سے ملاقات
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز اورسیمینارز منعقد کریگی : راجہ نجابت
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کی وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر اور شاہ غلام قادر سے ملاقات
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
راجہ نجابت حسین کا مسئلہ کشمیر پر بحث میں حصہ لینے پر ارکان یورپی پارلیمنٹ کو خراج تحسین
جب ریت پہ لکھو گے محبت کی کہانی!!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
مقبوضہ کشمیر میں نامعلوم افراد کا پولیس پر دستی بم سے حملہ، ایک شخص ہلاک، 3زخمی
سری نگر:مقبوضہ کشمیر کے علاقہ پلوامہ کے مقام پر نامعلوم افراد نے پولیس کو دستی بم سے نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں ایک شخص ہلاک اور 3 زخمی ہوگئے ۔بھارتی میڈیا رپورٹس کے مطابق جمعہ کے روز مقبوضہ کشمیر کے علاقے پلوامہ میں مران چوک پر نامعلوم افراد نے پولیس کے قافلے پر دستی بم پھینکے جس کے نتیجے میں ایک شخص ہلاک جب کہ 3 زخمی ہوگئے جن میں پولیس اہلکار بھی شامل ہیں۔ واضح رہے کہ گزشتہ ہفتے بھی ضلع شوپیاں میں نامعلوم افراد نے فوجی گاڑی پر حملہ کردیا تھا جس کے نتیجے میں 3 اہلکار ہلاک اور 4 زخمی ہوگئے تھے ۔علاوہ ازیں مقبوضہ کشمیر میں جمعہ کو یوم مزاحمت کے موقع پر لوگوں نے زبردست بھارت مخالف مظاہرے کئے اس دوران حریت رہنمائوں سمیت متعدد افراد کو زیر حراست لے لیا گیا ،بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں نے مظاہرین پر طاقت کا وحشیانہ استعمال کیا۔سرینگر، بڈگام، بانڈی پورہ ، حاجن ، بارہمولہ ، سوپور، پلہالن ، اسلام آباد، پلوامہ، شوپیان ،کولگام اور دیگر علاقوں میں لوگوں نے سڑکوں پر نکل کر زبردست مظاہرے کئے ۔مظاہرین نے آزادی اور پاکستان کے حق میں اور بھارت کے خلاف نعرے بلند کئے اور پاکستانی جھنڈے لہرائے ۔ مظاہرین کی قیادت حریت رہنمائوں آغا سید حسن الموسوی الصفوی ، نور محمد کلوال ، شوکت احمد بخشی، شبیر احمد ڈار، محمد اقبال میر ، تحریک حریت اور عوامی ایکشن کے اراکین نے کی۔ سرینگر، سوپور ، پلوامہ اور دیگر علاقوں میں بھارتی پولیس نے مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے پیلٹ گن ، پاواشیل اور آنسو گیس کا بے دریغ استعمال کیا جس کے بعدمظاہرین اور پولیس اہلکاروں کے درمیان جھڑپیں شروع ہوگئی۔پولیس کی کارروائی میں متعدد افراد زخمی ہوگئے ۔کٹھ پتلی حکام نے حریت رہنما سید علی گیلانی کوگھر میں نظربند رکھا۔ مختار احمد وازہ بدستور زیر حراست رہے ۔ بھارتی پولیس نے کل جماعتی حریت کانفرنس کے جنرل سیکریٹری شبیر احمد شاہ کو ترال قصبے سے گرفتار کرلیا وہ وہاں ممتاز مجاہد کمانڈر برہان وانی کے والدین سے ملاقات کیلئے گئے تھے ۔