مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
جموں کشمیر لبریشن لیگ برطانیہ و یورپ کی پاکستان اور آزاد کشمیر میں دہشتگردی کی مذمت
لندن:جموں کشمیر لبریشن لیگ برطانیہ و یورپ پاکستان اور آزاد کشمیر میں ہونے والے حالیہ دہشتگردی کے واقعات کی شدید مذمت کرتی ہے،مظفرآباد میں علامہ تصور پر حملے سے تحریک آزادی پر منفی اثرات مرتب ہونے کا اندیشہ ہے،بلوچستان میں فوجی افسر اور سپاہیوں کی شہادت ایک عظیم سانحہ ہے،ان خیالات کا اظہار جموں کشمیر لبریشن لیگ برطانیہ و یورپ کے صدر اور چیف آرگنائزر ڈاکٹر مسفر حسن شہدا کے لواحقین سے اظہار ہمدردی کرتے ہوئے کیا،ڈاکٹر مسفر نے سانحہ سیہون پر دکھ اور غم کا اظہار کرتے ہوئے اسے نہتے اور بے گناہ عوام پر حملہ قرار دیا،انہوں نے کہا کہ جو تنظیم بھی اس واقعہ میں ملوث ہے وہ بزدل لوگوں کا ایسا ٹولہ ہے جس کا کوئی مذہب نہیں جو انسانوں کی کسی بھی نسل سے تعلق نہیں رکھتے،انہوں نے مظفر آباد میں ہوئے اہل تشیع راہنما علامہ تصور پر قاتلانہ حملے کو بزدلانہ دہشتگردی کا واقعہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ آزاد کشمیر میں ایسے واقعات تحریک آزادی کے لئے انتہائی خطرناک ہو سکتے ہیں اور حکومت آزاد کشمیر کو اس ضمن میں فوری اقدامات اٹھانے کی ضرورت ہے،حال ہی میں بلوچستان میں فوجی افسر اور جوانوں پر دہشت گردوں کے حملے اور اس کے تنیجہ میں ہونے والی شہادتوں پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے ڈاکٹر مسفر حسن نے کہا کہ پاک فوج کے جوانوں اور افسروں نے گزشتہ روز کئی دہائیوں میں ملک اور قوم کی حفاظت کی خاطر بے بہا قربانیاں دی ہیں،لبریشن لیگ متاثرہ خاندانوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتی ہے،انہوں نے کہا پاکستان کے حکمرانوں کو عوام کی حفاظت کے مربوط پالیسی بنانے اور اس پر عملدرآمد کی ضرورت ہے جس میں بنیادی ضرورت پولیس کو جدید خطوط پر استوار کرنے کی ضرورت ہے پولیس سے سیاست ختم کرنے اور ملازمین کو بہتر پیکج دینے کی ضرورت ہے،انہوں نے جموں و کشمیر کے حوالے سے حکومت پاکستان کو یاد دلایا کہ جموں کشمیر ریاست کے عوام کے حق خود ارادیت کا مسئلہ ہے لیکن نواز شریف حکومت کے حالیہ بیانات سے اس بنیادی پالیسی سے انحراف کا اظہار کرتی ہے،انہوں نے کہا کہ حق خود ارادیت کے اصول سے ہٹ کر کوئی بھی فیصلہ جموں کشمیر کے عوام قبول نہیں کریں گے۔خصوصی رپورٹر:فیاض بشیر