مقبول خبریں
برطانوی حکومت مسئلہ کشمیر کے حل کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرے:ایم پی جیوڈتھ کمنز
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کا سابق پراسیکیوٹر ایڈوکیٹ جنرل ریاض نوید و دیگر کے اعزاز میں عشائیہ
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
اقوام متحدہ اپنی قرارداد پر عمل درآمد کرتے ہوئے کشمیریوں کو آزادی دلائے :لارڈنذیراحمد
اسلام آباد:کشمیر پر بین الاقوامی پارلیمانی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مقررین نے مطالبہ کیا ہے کہ اقوام متحدہ اور عالمی طاقتوں پر مسئلہ کشمیر حل کرنے کیلئے اپناکر دار ادا کرناچاہیے ،اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل نے کشمیر کی آزادی کوکشمیری عوام کے فیصلے پر چھوڑ دینے کی تجویز پیش کی تھی جس پر عملدرآمد ہونا چاہیے ۔جمعرات کو ’’مسئلہ کشمیر میں قوام متحدہ اور بڑی طاقتوں کے کردار‘‘سے متعلق سیشن سے خطاب کرتے ہوئے ہائوس آف لارڈ کے ممبرلا رڈ نذیر احمدنے کہا کہ اقوام متحدہ کی ذمہ داری ہے کہ اپنی قرارداد پر عمل درآمد کرتے ہوئے کشمیر کو آزادی دلائے ، بھارت کی جانب سے لائن آف کنٹرول پر اشتعال انگیزی جاری ہے ،جس میں سویلین کو نشانہ بنایا جا رہا ہے ،بھارت اسے سرجیکل سٹرائیک کہتاہے تاہم پاکستان کی جانب سے پھر بھی اس معاملے کو انٹرنیشنل کورٹ آف جسٹس میں نہیں اٹھایا جا رہا ہے ۔ سلامتی کونسل کے ممبران کی تعداد پانچ سے بڑھا کر 20 کرنی چاہیے اور اس میں پاکستان کو شامل کرنا چائیے ،اگر دنیا میں امن چاہیے تو کشمیر کو آزاد کرنا ہو گا۔انہو ں نے کہا کہ سوڈان اور مشرقی تیمور پر اقوام متحدہ رائے شماری کراسکتا ہے تو کشمیر میں رائے شماری کیوں نہیں ہوسکتی۔سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ مقبوضہ کشمیر میں بھارتی بربریت کا نوٹس لے اورکشمیر میں فیکٹ فائنڈ نگ مشن بھیجے ، صدر آزاد جموں کشمیر سردار مسود خان نے کہا کہ کشمیریوں کے خون میں آزادی ہے اورآزادی کے حصول کے بغیر کشمیری چین سے نہیں بیٹھیں گے ،میر واعظ عمر فاروق نے کشمیر کا جھنڈا بلند کر کے جرات کا ثبوت دیا ہے ،ہمارا مطالبہ ہے کہ یاسین ملک کو رہا کیا جائے کشمیر میں کوئی دہشتگردی نہیں ہے ، وہ اپنی عزت اور اپنی زمین کے تحفظ کے لیے لڑ رہے ہیں مگر ان کو سڑکوں پر بھارتی فوجیں مار رہی ہیں ،سرینگر کی گلیاں پکار رہی ہیں کہ کشمیر بھارت کا حصہ نہیں ہے ،بیرسٹر سیف نے کہا رونے والے غلام اور لڑنے والے آزاد ہوتے ہیں۔یورپین پارلیمنٹ کے ممبر افضل خان نے کہا کہ بھارتی مظالم کو اب چھپایا نہیں جا سکتاہے ، اعجاز الحق نے کہا کشمیر میں بھارتی مظالم کو اجاگر کرنے کے لئے تمام پاکستانی سفارتخانوں میں کشمیر ڈیسک قائم اورمستقل سفیر تعینات کئے جائیں،ماروی میمن ،عطیہ عنایت اللہ اورعزیر ملک نے کہاکہ ہمارے دل کشمیریوں کے ساتھ دھڑکتے ہیں ،حریت رہنما یاسین ملک کی اہلیہ مشال ملک نے کہا کہ مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کانامکمل ایجنڈا ہے ، مقبوضہ کشمیر میں غیر ریاستی باشندوں کو آباد کر کے یواین کے آرٹیکل 370 کی خلاف ورزی کی جارہی ہے ، مقبوضہ کشمیر کے صحافی سہیل شاہ نے کہاکہ 2016 تحریک آزادی کشمیر کے لیے ایک خونی سال تھا ، ڈاکٹر نیاز اے شاہ کشمیرکامقدمہ عالمی عدالت انصاف میں بھی لڑا جائے ، ممبر یورپین پارلیمنٹ امجد بشیر نے کہاکہ مقبوضہ کشمیر میں طاقت کے ذریعے کشمیریوں کی آواز کو کچلنے کی کوشش کی جارہی ہے وہاں انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہورہی ہے یورپی یونین پارلیمنٹ میں بھی قرارداد پیش کی جائے گی، لارڈ قربان حسین نے کہاکہ کشمیریوں نے کبھی بھی بھارتی تسلط کو تسلیم نہیں کیا۔ادھربرطانوی ہائوس آف لارڈز ، یورپی پارلیمنٹ ،برطانوی پارلیمنٹ کے اراکین،برطانیہ کے مختلف علاقوں کے منتخب کونسلرز کا مظلوم کشمیریوں کا مقدمہ بین الاقوامی برادری کے سامنے لڑنے کا اعلان کیا ہے ،آزادحکومت کی کارکردگی پر اطمینان کااظہار پائیدار ترقی و خوشحالی کے لیے ہرممکن تعاون کی یقین دہانی کرائی، وزیر اعظم آزا دکشمیر راجہ فاروق حیدر کے عشائیے میں لارڈ نذیر احمد ،لارڈ قربان حسین، ممبران یورپی پارلیمنٹ راجہ افضل خان، امجد شریف، ممبر برطانوی پارلیمنٹ خالد مرزا ،کونسلرز یاسمین ڈار،کونسلر اصغر قریشی ،سمیت برطانیہ کے مختلف شہروں کے کونسلرز ، صحافیوں ، سول سوسائٹی سے تعلق رکھنے والے افراد نے شرکت کی ۔راجہ فاروق حیدرنے کہا کہ آزاد حکومت تارکین وطن کے مسائل کے حل کیلئے ہر ممکن اقدامات اٹھار ہی ہے ۔ لارڈ قربان حسین نے کہا کہ ماضی میں ہم نے متعدد بار ریاستی حکومت کو مختلف پراجیکٹس کے حوالے سے آفرز کیں مگر کبھی اس کو سنجیدہ نہیں لیا گیا۔ آزاد کشمیر میں تعلیم ،صحت اوردیگر شعبہ جات کی ترقی کیلئے بھرپور تعاون کیلئے تیار ہیں ۔ لارڈ نذیر نے کہا کہ کشمیری جب تک اپنا مقدمہ خود بین الاقوامی برادری کے سامنے نہیں رکھیں گے کو ئی ان کی بات نہیں سنے گا۔ آزاد کشمیر حکومت مقبوضہ کشمیر اور ہمارے درمیان معلومات کی بروقت ترسیل کیلئے پل کا کرادا ادا کرے ۔