مقبول خبریں
اولڈہم ٹاؤن میں پہلی جنگ عظیم کی صد سالہ تقریب،جم میکمان،مئیر کونسلر جاوید اقبال و دیگر کی شرکت
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
امن کا نوبل انعام کیمیائی ہتھیاروں کے خاتمے کیلئے کام کرنے والی تنظیم کے نام ..!!
اوسلو ... نوبل امن ایوارڈ کے منتظر کروڑوں لوگوں کی بے چینی بالآخر ختم ہوئی امن کےلیئے کام کرنے والی عالمی تنظیم "آرگنایزیشن فار دی پروٹیکشن آف کیمیکل ویپنز " کو 2013 کے امن کے نوبل انعام کا حقدار قرار دیا گیا۔ عالمی میڈیا کا ایک حصہ جس میں اکثریت پاکستانی میڈیا کی تھی اس فیصلے سے مایوس نظر آیا کیونکہ وہ پہلے سے تصور کر چکے تھے کہ اس سال یہ انعام ملالہ یوسف زئی کو ہی ملے گا۔ جبکہ یہ انعام شام میں ہتھیاروں کو تلف کرنے میں مصروف انسدادِ کیمیائی ہتھیاروں کی تنظیم کو دیا گیا ہے۔ اس سال نوبیل امن انعام کے لیے ریکارڈ 259 افراد کو نامزد کیا گیا تھا جن کے ناموں کو صیغۂ راز میں رکھا گیا ہے لیکن عالمی سٹے بازوں کے نزدیک بھی ملالہ کو انعام ملنے کا امکان سب سے زیادہ تھا۔ باضابطہ طور پر نوبیل انعام کے لیے نامزد افراد کی فہرست 50 سال تک منظرِ عام پر نہیں لائی جاتی۔ تاہم نامزدگی کرنے والے افراد اپنی مرضی سے اپنے امیدوار کا نام ظاہر کر سکتے ہیں۔ انعام کے متوقع جیتنے والوں میں جمہوریہ کانگو سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر ڈینس میوکیوجی اور وکی لیکس کو خفیہ دستاویزات فراہم کرنے والے سابق امریکی چیلسی میننگ کو بھی اس انعام کے لیے متوقع طور پر نامزد امیداروں کی فہرست میں شامل کیا گیا تھا۔ منظر عام پر آنے والے دیگر امیدواروں میں روس کے صدر ولادیمیر پوتن، یو ٹو میوزک بینڈ کے گلوکار بونو اور وکی لیکس کے بانی جولین اسانج بھی شامل تھے۔ دیگر امیدواروں میں وہ مصری کمپیوٹر سائنسدان بھی شامل تھے جو تعلیم چھوڑ کر عیسائی راہبہ بن گئی اور خیراتی ادارے سٹیفنز چلڈرن کی اور ایک امیدوار روس سے تعلق رکھنے والے ریاضی کی سابق استاد سوینٹلانہ گاننوشینکا تھے جنھوں نے انسانی حقوق کی تنظیم سول اسسٹنس کی بنیاد ڈالی۔ نوبل انعام ڈاکٹر الفرڈ نوبل کی وصیت کے مطابق ان کی عالمی سرمایہ کاری میں لگائی گئی دولت سے فزکس، کیمسٹری اور میڈیسن کے شعبہ جات میں نئی ایجادات اور تخلیقات پیش کرنے والوں کو دیا جاتا ہے جسکی مالیت ملین ڈالرز میں ہوتی ہے۔ جبکہ چوتھا شعبہ ادب کا ہے اور پانچویں نمبر پر امن کا نوبل انعام ہے جسکی اس سال انعامی مالیے ساڑھے بارہ لاکھ ڈالرز تھی۔ امسال انعام حاصل کرنے والی تنظیم او پی سی ڈبلیو کا بیڈ کوارٹر ہیگ میں ہے اور اس نے انسانیت کو کیمیائی ہتھیاروں سے بچانے کے کام کا آغاز ١٩٩٧ سے کیا تھا۔