مقبول خبریں
اولڈہم ٹاؤن میں پہلی جنگ عظیم کی صد سالہ تقریب،جم میکمان،مئیر کونسلر جاوید اقبال و دیگر کی شرکت
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
کراچی میں رندھاوا قتل کیس کا ملزم سیاسی جماعت کا رکن نکلا، چشم دید گواہ کی تصدیق
کراچی ...کراچی کی ایک عدالت میں قتل کے ایک چشم دید گواہ نے معروف صحافی ولی خاں بابر کیس کی پیروی کرنے والے وکیل مسلم لیگ لائرز فورم کے رحمت علی رندھاوا کے قتل کیس میں گرفتار ملزم کی شناخت کرلی ہے۔ اس ملزم کا تعلق ایک معروف سیاسی جماعت سے ہے اور پولیس پہلے ہی اس پر قتل کے یقین کا اظہار کرچکی ہے۔ کراچی پولیس چیف شاہد حیات نے اس ملزم کا تعلق شہر کی ایک بڑی اہم اور بااثر سیاسی جماعت کے ساتھ ظاہر کیا تھا۔ جوڈیشل مجسٹریٹ کی عدالت میں ملزم اور گواہ کو چہرے ڈھانپ کر پیش کیا گیا تھا۔ واضع رہے کہ اس کیس میں ملوث ہونے والی جماعت نے ہمیشہ اپنے بے گناہ ہونے کا کہا ہے جبکہ آج تک وکیل سمیت سات گواہ ایسی ہی باتیں کرنے کی پاداش میں موت قبول کرچکے ہیں۔ مقتول وکیل رحمت رندھاوا صحافی ولی بابر کے قتل کیس کی پیروی کر رہے تھے، اس واقعے کے بعد کراچی بدامنی کیس کی سماعت کے دوران سپریم کورٹ نے حکومت کو گواہوں کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے قانون سازی کے احکامات جاری کیے تھے۔ سندھ اسمبلی نے گواہوں کے تحفظ کا قانون بھی منظور کیا تھا، جس کے تحت گواہ عدالتی کارروائی میں ماسک پہن کر اپنی شاخت چھپا سکتا ہے، اس کے علاوہ گواہ کو محفوظ مقام پر رہائش کے علاوہ معاشی معاونت بھی فراہم کی جائےگی۔