مقبول خبریں
پاکستانی کمیونٹی سنٹر اولڈہم میں بیڈمنٹن ٹورنامنٹ کا انعقاد، برطانیہ بھر سے 20 ٹیموں کی شرکت
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
میرپور میں تارکین وطن کیلئے رہائشی منصوبہ تاحال بنیادی سہولیات سے محروم ہے:متاثرین
لندن :اوورسیز پاکستانیز فاؤنڈیشن کے زیر اہتمام میرپور میں بیرون ملک آباد تارکین وطن کیلئے 1980کی دہائی میں چتر پڑی کے مقام پر ایک رہائشی منصوبہ کا آغاز کیا گیا۔جو اس دور میں دوسری رہائشی ٹیموں کے مقابلے میں مہنگے ترین تھی ۔ ہاؤسنگ سکیم میں ہر قسم کی ضروریات فراہم کرنے کا بھی وعدہ کیا گیا مگر 30/35سال گزرجانے کے بعد بھی مذکورہ ہاؤسنگ تمام بنیادی سہولیات بجلی، گیس، پانی، سیوریج سسٹم، شفا خانہ، مسجد اور دیگر ترقیاتی کاموں سے تاحال محروم ہے۔ کچھ عرصہ قبل اس ایریا کے ارد گرد دیوار بنائی گئی تھی مگر وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ یہ دیوار بھی ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوگئی اور جسکی اینٹیں تک غائب ہوگئیں۔ مذکورہ تمام تر مسا ئل کے باوجود اوورسیز فاؤنڈیشن نے پلاٹ مالکان کو اب نئے نوٹس جاری کئے ہیں جن کی ا کثر یت ا و و ر سیز پا کستا نیز پر مشتمل ہے ۔ اور لاکھوں میں مزید ترقیاتی فنڈز کے نام پر مالکان کو کہا جارہا ہے کہ فاؤنڈیشن کو ادا کئے جائیں اور دھمکیاں دی جارہی ہیں کہ اگر مطلوبہ فنڈز نہ جمع کرائے گئے تو ان کی الاٹمنٹ منسوخ کردی جائے گی۔ ان خیالات کا اظہار برطانیہ میں مقیم متاثرین نے ایک پرہجوم پریس کانفرنس می خطا ب کر تے ہو ئے کیا۔ اس مقصد کیلئے متاثرین کی ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جس کے سربراہ آزاد کشمیر سے معروف کنسلٹنٹ سرجن ڈاکٹر جمیل احمد میر ہیں جو آ جکل آ ئر لینڈ میں خد ما ت سر ا نجا م د ے ر ہے ہیں۔ کمیٹی کے دوسرے ارکان میں پاکستان مسلم لیگ ن، آزاد کشمیر برطانیہ کے سینئر نائب صدر خواجہ محمد ظہور خان، گریٹر لندن کے صدر راجہ تاج خان، نائب صدر ایوب میرپوری، چیف آرگنائزر راجہ ذوالفقار آف جبی اور آزاد کشمیر تحریک انصاف برطانیہ کے سینئر رہنما چوہدری دلپذیر شامل ہیں۔ آزاد کشمیر کے سابق ایڈووکیٹ جنرل اور نیب کے سابق چیف پراسیکیوٹر ریاض نوید بٹ نے اس میں خصوصی شرکت کی۔ڈاکٹر جمیل احمد نے اپنے خطاب میں اس سکیم کے بارے میں تفصیلاً اعداد و شمار پیش کئے اور بتایا کہ کس طرح اوورسیز فاؤنڈیشن ناجائز طریقے سے تارکین وطن کو تنگ کر رہے ہیں اور سراسر ظلم اور زیادتی کر رہے ہیں۔ حالانکہ متاثرین پہلے بھی اس کی بہت زیادہ قیمت ادا کرچکے ہیں مگر فاؤنڈیشن کی طرف سے شرائط کے تحت ترقیاتی کام نہیں کئے گئے۔ انہوں نے بتایا کہ اس سکیم کی قانونی حیثیت بھی مشکوک ہے کیونکہ حکومت پاکستان یا اس کا کوئی ادارہ آزاد کشمیر میں کسی قسم کی زمین پر قابض نہیں ہوسکتا۔انہوں نے حکومت آزاد کشمیر کے وزیراعظم، صدر آزاد کشمیر، چیف جسٹس آزاد کشمیر اور متعلقہ وفاقی وزیر سے مطالبہ کیا کہ اس ظلم پر فوراً نوٹس لیا جائے اور اس کی مکمل چھان بین کی جائے کہ اس طرح کا ظلم کیوں کیا جارہا ہے۔ پاکستان مسلم لیگ ن آزاد کشمیر برطانیہ کے سینئر نائب صدر خواجہ ظہور خان جو بذات خود اس سکیم کے متاثرین میں سے ہیں نے کہا کہ ہم اوورسیز پاکستانیز فاؤنڈیشن کے اس ظلم اور ناانصافی پر مبنی نوٹسز کو یکسر مسترد کرتے ہیں۔ انہون نے ن لیگ کی آزاد کشمیر حکومت اور وفاقی حکومت سے مطالبہ کیا کہ اس کا نوٹس لیا جائے ورنہ ہم ہر فورم پر اس کے خلاف آواز اٹھائیں گے۔ عدالتوں کا دروازہ بھی کھٹکھٹایا جاسکتا ہے۔ مہمان خصوصی حکومت آزاد کشمیر کے سابق ایڈووکیٹ جنرل ا و ر نیب آزاد کشمیر کے سابق چیف پراسیکیوٹر ریاض نوید بٹ نے اس سکیم بارے تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ متاثرین کو موجودہ حکومت آزاد کشمیر سے رجوع کے ساتھ ساتھ وفاقی حکومت کے متعلقہ وزیر سے بھی رابطہ کرنا چاہئے۔ لندن کے معروف قانون دان اور سالیسٹر امتیاز رانجھا نے قانونی پہلوؤں پر روشنی ڈالتے ہوئے تجویز پیش کی کہ متاثرین کو ہائی کورٹ سے رجوع کرنا چاہئے کیونکہ اس بارے سپریم کورٹ کے بہت سارے فیصلے اس کے ریفرنس میں پیش کئے جاسکتے ۔ آزاد کشمیر مسلم لیگ ن گریٹر لندن کے صدر راجہ تاج خان نے تجویز پیش کی کہ ہم متاثرین کو حال ہی میں آزاد کشمیر میں راجہ فاروق حیدر خان کی سربراہی میں قائم ہونے والی حکومت سے رابطہ کرنا چاہئے۔ کیونکہ راجہ فاروق حیدر بذات خود ایک باکردار وزیراعظم ہیں۔ وہ ضرور اس قسم کی زیادتیوں کا ازالہ کریں گے۔لندن کے معروف سماجی رہنما پروفیسر ظفر اقبال ایڈووکیٹ نے تجویز پیش کی کہ ہم تارکین وطن کو موجودہ آزاد کشمیر کی حکومت کو اس قسم کے مسائل حل کرنے کے لئے 6ماہ کا وقت دینا چاہئے اس کے بعد اگر ان مسائل پر قابو پانے میں ناکام رہتے ہیں تو پھر ہمیں ان کے وزراء اور دیگر سرکاری اہلکاروں کو لندن اور دوسرے شہروں میں آمد کے موقع پر استقبال کرنا اور ان کو دعوتوں اور دیگر تقریبات میں مدعو کرنا چھوڑ دینا چاہئے اور ان کے خلاف مظاہرے کرنا چاہیں۔ معروف کاروباری سیاسی رہنما اور متاثرین کے ایک رکن چوہدری مختار احمد نے اوورسیز پاکستانیوں کو درپیش مسائل کا ذکر کرتے ہوئے حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا کہ حال ہی میں (NICOP)نادرہ کارڈ حاصل کرنے کیلئے فیس میں ہوشربا اضافے کو فوراً واپس لیا جائے کیونکہ 65پونڈ کی فیس بہت زیادتی ہے حالانکہ تارکین وطن اپنے خون پسینے کی کمائی سے اربوں میں زرمبادلہ اپنے ملک بھجواتے ہیں جو معیشت میں اہم کردار ادا کر رہے ہیں۔ متاثرین کے اہم رکن اور آزاد کشمیر تحریک انصاف لندن برطانیہ کے سینئر رہنما چوہدری دلپذیر نے اوورسیز پاکستانیوں کو درپیش مسائل کا ذکر کرے ہوئے مطالبہ کیا کہ ہمیں اس کے خلاف آواز اٹھانا چاہئے۔ ن لیگ آزاد کشمیر برطانیہ کے چیف آرگنائزر اور ممبر متاثرین راجہ ذوالفقار آف جبی نے تجویز پیش کی کہ حکومت آزاد کشمیر کو اوورسیز پاکستانیوں کے مسائل کے حل کیلئے ایک خصوصی ا د ا ر ہ یا وزارت بنانا چاہئے جو خالصتاً تارکین وطن کو درپیش مسائل کو حل کرنے کے لئے ہو۔ پریس کانفرنس کے آخر میں تمام شرکاء نے اوورسیز پاکستانیز فاؤنڈیشن کی طرف سے کئے جانے والے اقدامات اور نوٹس جاری کرنے کے عمل کو غیر قانونی قرار دیتے ہوئے متفقہ طورپر اس تجویز پر سب سے پہلے اس کیس کو حکومتی لیول تک اٹھانے اور پھر عدالتی چارہ جوئی کرنے پر اتفاق کیا۔ اور پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا پر زور دیا کہ اس معاملے کوپوری طرح اجاگر کیا جائے تاکہ حکومت وقت اس ظلم کو ختم کرنے پر مجبور ہوجائے۔