مقبول خبریں
راچڈیل کیسلمئیرسنٹر میں کمیونٹی کو صحت مند رہنے،حفاظتی تدابیر بارے آگاہی ورکشاپ کا انعقاد
یورپی پارلیمنٹ میں قائم ’’فرینڈز آف کشمیر گروپ‘‘ کی تنظیم سازی کردی گئی
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
ہم نے سچ کو دیکھا ہے جھوٹ کے جھروکوں سے!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
منصوبہ بندی کے باوجود امریکہ میں لاکھوں سرکاری ملازمتیں خطرے کا شکار !!
نیو یارک ... امریکی ایوان نمائندگان نے جس میں ریپبلیکن پارٹی کی اکثریت ہے صدر اوباما کے ہیلتھ کیئر پلان پر فنڈ روکنے کے حق میں ووٹ دیا جس کے بعد ملک بھر میں سرکاری سروسز کے بند ہونے کے امکانات بڑھ گئے ہیں۔ حزب اختلاف اور حکومت میں اختلافات ختم نہ ہونے کی صورت میں اگلے اڑتالیس گھنٹوں میں لاکھوں سرکاری ملازم تنخواہوں سے محروم ہو جائیں گے جسکے بعد لامحدود ہڑتالوں کا خطرہ درپیش ہے۔ اگر سرکاری سروسز یکم اکتوبر کو بند ہوتی ہیں تو اکیس لاکھ سرکاری ملازمین میں سے ایک تہائی کو کام روکنا ہوگا اور اس بات کی کوئی گارنٹی نہیں ہے کہ اس مسئلے کے حل ہونے کی صورت میں انہیں اس عرصے کی تنخواہیں ملیں گی۔ امریکی مالی سال ٣٠ ستمبر کوپیر کی رات ختم ہو جائےگا اور اس سے قبل حکومت کے لیے اخراجات کے بل سے متعلق ایک نئی پالیسی پر اتفاق رائے کرنا ضروری ہے۔ اگر حکومت ایسا کرنے میں ناکام رہی تو غیر اہم سرکاری سروسز کو بند کرنا پڑے گا جس سے کئی افراد کی نوکریوں کو خطرہ ہوگا یا پھر وہ بغیر تنخواہ پر کام پر مجبور ہوں گے۔وائٹ ہاؤس کے ترجمان جے کارنے کا کہنا تھا کہ اگر ریپبلیکن پارٹی کا کوئی رکن اس بل کے حق میں ووٹ دے گا تو وہ سروسز کے بند ہونے کے لیے ووٹ دے گا۔ ترجمان کا کہنا تھا کہ صدر اس ریپبلیکن بل کو ویٹو کر دیں گے۔ اہم ایوان میں ریپبلیکن پارٹی کے اراکین نے ویٹو کیے جانے کے تمام اندیشوں کو رد کرتے ہوئے بل میں ترمیم کی اور اسے 192 کے مقابلے میں 231 سے منظور کروا لیا۔ سینیٹ میں صدر اوباما کی ڈیموکریٹ جماعت کی اکثریت ہے جبکہ ایوان نمائندگان میں ریپبلیکن پارٹی کو اکثریت حاصل ہے۔