مقبول خبریں
دی سنٹر آف ویلبینگ ، ٹریننگ اینڈ کلچر کے زیر اہتمام دماغی امراض سے آگاہی بارے ورکشاپ
پارٹی رہنما شعیب صدیقی کو پاکستان تحریک انصاف پنجاب کا سیکریٹری جنرل بننے پر مبارک باد
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
جس لڑکی نے خواب دکھائے وہ لڑکی نابینا تھی!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
دہشت گردی کا شکار ممالک میں اسلحہ کی بجائے کتابیں بھیجئے: ملالہ کی عالمی رہنماؤں سے اپیل
نیویارک... امریکہ کے اس شہر میں جہاں دنیا کے اہم رہنما جنرل اسمبلی کے خصوصی اجلاس میں شرکت کے لئے اکٹھے ہیں پاکستان کی ایک باہمت لڑکی ملاله یوسف زئی نے بھی اپنی نحیف مگر پرعزم آواز میں عالمی رہنماؤں سے درخوست کی ہے کہ براہ کرم دنیا کو بربادی کیلئے اسلحہ اور بارود کی بجائے علم کے حصول کیلئے کتابیں اور قلم دیجئے ملالہ یوسف زئی نے نیویارک میں اقوام متحدہ کی مہم ’’گلوبل ایجوکیشن فرسٹ‘‘ یا ’’عالمی تعلیم پہلے‘‘ کی پہلی سالگرہ میں شرکت کی۔ اس موقع پر ملالہ نے کہا کہ افغانستان اور اس جیسے دہشت گردی کا شکار ممالک میں اسلحے اور ٹینکوں کے بجائے کتابیں بھیجی جانی چاہییں۔ ’’ٹینک بھیجنے کے بجائے قلم بھیجیے،‘‘ ملالہ نے اس موقع پر اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا۔ گزشتہ برس اکتوبر میں ملالہ یوسف زئی کو پاکستان کے شمال مغربی علاقے سوات میں طالبان نے گولی کا نشانہ بنا کر ہلاک کرنے کی کوشش کی تھی۔ ملالہ کی جان اس حملے میں تو بچ گئی تاہم وہ شدید زخمی ہوئیں۔ بعد ازاں ان کو علاج کے لیے برطانیہ لے جایا گیا۔ ملالہ سوات میں لڑکیوں کی تعلیم کے فروغ کے لیے کام کر رہی تھیں۔ اس واقعے کے بعد ان کی شہرت بین الاقوامی سطح تک پہنچ گئی۔ آج ملالہ دنیا بھر میں انسانی حقوق اور بچوں کی تعلیم کے لیے جدوجہد کا ایک نام بن چکی ہیں۔ ان کو نوبل امن انعام کے لیے بھی نامزد کیا گیا ہے۔ ملالہ کی تقریر سننے کے لیے نوبل امن انعام یافتہ ڈیسمنڈ ٹوٹو، بنگلہ دیش کی وزیر اعظم شیخ حسینہ اور کروشیائی وزیر اعظم بھی موجود تھے۔ ملالہ نے اس موقع پر کہا، ’’فوجی نہیں اساتذہ بھیجیے۔‘‘ نیویارک ہی میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کے لیے گئے پاکستانی وزیر اعظم نواز شریف نےبھی ملالہ یوسف زئی سے ملاقات کی اور کہا ملالہ پاکستان کی بیٹی ان کی بیٹی ہے سابق برطانوی وزیر اعظم اور اقوام متحدہ کے سفیر گورڈن براؤن بھی اس موقع پر موجود تھے ۔ اقوام متحدہ کے اعداد و شمار کے مطابق اسکول جانے کے قابل ستاون ملین بچے، جن میں باون فیصد لڑکیاں ہیں، تعلیم حاصل نہیں کر پاتے۔ ملالہ نے مزید کہا، ’’میرا خواب ہے کہ ہر بچہ پڑھ لکھ جائے۔ میرا خواب ہے کہ ہر انسان برابر ہو۔‘‘ ملالہ کا اقوام متحدہ کا یہ پہلا دورہ نہیں ہے۔ جولائی کے مہینے میں وہ اقوام متحدہ گئی تھیں جہاں انہوں نے جنرل اسمبلی سے خطاب کیا تھا۔ اس موقع پر وہاں موجود لوگوں نے ان کا کھڑے ہو کر استقبال کیا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ شدت پسند ان کو خاموش نہیں کر سکتے۔