مقبول خبریں
اولڈہم کے نوجوانوں کی طرف سے روح پرور محفل، پیر ابو احمد مقصود مدنی کی خصوصی شرکت
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
پاکستانی عوام اور حکومت کا فرض ہے کہ ملک دشمن عناصر کے خلاف متحد ہو جائیں: کمیونٹی رہنما
لوٹن... کمیونٹی کے معروف سیاسی، سماجی، دینی رہنماؤں نے پشاور میں ہونے والے بم دھماکوں اور ہلاکتوں پر شدید رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ مشکل کی اس گھڑی میں ہم اپنے مسیحی بہن بھایوں کے ساتھ ہیں ان رہنماؤں جن میں لارڈ نذیر احمد، سجاد کریم ایم ای پی، رحمان چشتی ایم پی، بیرونس سیدہ وارثی سمیت سبق میئر کونسلے لیاقت علی، کاؤنٹی کونسلر چودھری الله دتہ، معروف بزنس مین ناہید رندھاوا، چودھری شکیل احمد، راجہ توصیف کیانی، نذیر قریشی، چودھری عبدالمالک آف بریڈ فورڈ، پی ٹی آئ کے صاحب زادہ جہانگیراور امجد خان نے واقعہ پر دلی افسوس اور دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ پشاور میں عیسائیوں کی عبادت گاہ پر خود کش حملہ اور اس میں80 سے زائد افراد کی ہلاکت ایک انتہائی ناقابل برداشت اور قابل مذمت واقعہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کو چاہئے کہ وہ پاکستان کے عوام، تمام مسلمانوں، تمام مکاتب فکر اور تمام مذاہب کے لوگوں کو یکساں اور فوری تحفظ مہیا کرے، یہ حکومت کی آئینی، قانونی، دینی اور اخلاقی ذمہ داری ہے۔ دہشت گرد نہ انسان ہیں نہ مسلمان ہیں اور نہ ہی ان میں انسانیت، شرافت، دین یا اسلام کی کوئی قدر یا شناخت موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ حکومت پاکستان کو چاہئے کہ وہ دہشت گردوں اور دہشت گردوں کی سیاسی اور اخلاقی حمایت کرنے والوں کے خلاف عملی اور موثر اقدامات کرے۔ اگر حکومت نے ایسا نہ کیا اور وقت ضائع کر دیا گیا تو پھر پاکستان کی سلامتی اور بقا کو خطرات درپیش رہیں گے۔آل پڑتی کشمیر رابطہ کمیٹی کے صدر شہزاد اقبال، سرپر ست مولانا محمد بوستان القادری ،تحریک کشمیربرطانیہ کے صدر محمّد غالب پاکستان پریس کلب کے صدر فیاض غفور جنرل سیکریٹری اظہر جاوید پاکستان جرنلسٹ ایسوسی ایشن کے جنرل سیکریٹری وجاہت علی خان نےاس حملے کو وحشیانہ ظالمانہ اور انسانیت سے گری ہوئی حرکت قرار دیتے ہوئے حکومت پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ حکومت مصلحت اور کمزوری اور غیر ذمہ دارانہ طرز عمل کو ترک کرکے دہشت گردوں کے خاتمے اور پاکستان کے معصوم، مظلوم اور بے گناہ عوام کو تحفظ دینے کی ذمہ داری پوری کرے اور پاکستان کے آئین کو قوانین کی پاسداری کرے۔ پی پی پی کے حقیقی بانی رہنما اور موروثی سیاست کے مخالف امان اللہ خان پاکستان فورم کے رہنماؤں قاری تصور الحق مدنی، حاجی محمد سعید مغل، چوہدری شاہ نواز، مولوی لیاقت علی گورسی، قاری محفوظ الرحمن، آصف مغل اور مرزا اختر نے ان تمام قوتوں کی شدید مذمت کی جو نہتے شہریوں کے خون کی ہولی کھیل رہے ہیں اور وفاقی اور صوبائی حکومتوں سے عوام کے جان و مال کی حفاظت کامطالبہ کیا اور عیسائی کمیونٹی سے دلی ہمدردی کا اظہار کیا۔سینئر کشمیری رہنما مولانا محمد یعقوب چشتی نے اس سانحہ پر گہرے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گرد پاکستان کے عوام کو شکست نہیں دے سکتے۔ اب پاکستان کے عوام اور قیادت کا فرض ہے کہ متحد ہوکر ملک دشمنوں کا مقابلہ کریں۔ سماجی رہنما شیخ سربلند نے کہا کہ اس امر کا جائزہ لینا ضروری ہے کہ پاکستان میں امن قائم ہونے سے پہلے ہی کون لوگ اس کا دشمن ہیں اس واقعہ کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے ۔انہوں نے کہا کہ عبادت کرتے ہوئے حملہ کرنا بزدلانہ فعل ہے اور کوئی مذہب اس کی اجازت نہیں دیتا۔