مقبول خبریں
راچڈیل مساجد کونسل کی طرف سے مئیر کونسلر محمد زمان کی مئیر چیرٹیز کیلئے فنڈ ریزنگ ڈنر کا اہتمام
اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی سیل بنایا جانا چاہئے: سلیم مانڈوی والا
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
برطانیہ میں آباد تارکین وطن کی مسئلہ کشمیر پر کاوشیں قابل تحسین ہیں:چوہدری محمد سرور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
کشمیریوں کو ان کا حق دیئے بغیر خطے میں پائیدار امن کا حصول ممکن نہیں: راجہ نجابت حسین
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
برطانیہ میں مقیم کشمیری و پاکستانی 16مارچ کو بھارت کے خلاف مظاہرہ کریں گے: راجہ نجابت حسین
وہ بے خبر تھا سمندر کی بے نیازی سے!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
اسلامی نظریاتی کونسل نے ڈی این اے اور توہین رسالت جھوٹی گواہی کے قوانین کو رد کردیا
اسلام آباد ... پاکستان کی مقننہ کو قانون سازی کے لئے معاونت فراہم کرنے والے ادارے اسلامی نظریاتی کونسل کے چیئرمین مولانا محمد خان شیرانی نے کہا ہے کہ جنسی زیادتی کے مقدمات میں ڈی این اےٹیسٹ واحد اور بنیادی ثبوت کے طور پر قبول نہیں کیا جا سکتا۔ کونسل کے دیگر ارکان کے ہمراہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا شیرانی نے جنسی زیادتی کے مقدمات میں ڈی این اے ٹیسٹ کو بنیادی شہادت کے طور پر قبول کرنے اور توہین رسالت کا جھوٹا الزام لگانے والے کو سزائے موت دینے کی تجاویز کو رد کیا ہے۔ انھوں نے کہا کہ عدالت میں ڈی این اے ٹیسٹ کو معاون یا اضافی شواہد کے طور پر پیش کیا جا سکتا ہے لیکن صرف اس کی بنیاد پر کوئی مقدمہ قائم نہیں کیا جا سکتا۔ انھوں نے مزید کہا کہ کونسل نے خواتین کے حقوق کے بارے میں وومن پروٹیکشن ایکٹ دو ہزار چھ کو بھی رد کر دیا اور کہا کہ یہ اسلامی اقدار سے مطابقت نہیں رکھتا۔ ساتھ ہی یہ بھی کہا گیا کہ حدود آرڈننس میں ان تمام جرائم کا احاطے کیا گیا ہے۔ چیئرمین اسلامی نظریاتی کونسل کا تعلق جمیعت علمائے اسلام فضل الرحمان گروپ سے ہے انھوں نے کہا کہ اسلام میں جنسی زیادتی کے مقدمات سے نمٹنے کے تمام طریقے موجود ہیں۔