مقبول خبریں
عبدالباسط ملک کے والدحاجی محمد بشیر مرحوم کی روح کے ایصال ثواب کیلئے دعائیہ تقریب
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
میاں جی کی لڑکیاں
پکچرگیلری
Advertisement
مہاجر ری پبلکن آرمی کا متحدہ قومی موومنٹ سے نہیں بلکہ تعلق کہیں اور ہے: چوہدری نثار
اسلام آباد ... وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا ہے کہ کراچی کے ٹارگٹ کلرز شمالی وزیرستان میں روپوش ہوگئے ہیں۔ جن کی تعداد 250ہے۔ لیکن یہ جرائم پیشہ افراد کہیں بھی چھپ جائیں انہیں بخشا نہیں جائے گا۔ قومی اسمبلی میں خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کراچی کے حالات ٹھیک کرنا آسان نہیں ہے۔ سندھ حکومت سمیت تمام سیاسی جماعتوں سے مشاورت کے بعد کراچی آپریشن شروع کیا گیا لیکن کراچی سے 250 ٹارگٹ کلرز شمالی وزیرستان چلے گئے .. انہوں نے ساتھی پارلیمنٹیرینز کو بتایا کہ وزیراعلیٰ سندھ قائم علی شاہ کی نگرانی میں کراچی آپریشن کامیابی سے آگے بڑھ رہا ہے۔15 دنوں کے میں کراچی میں رینجرز کے 400 اور پولیس کے 1000 آپریشنز ہو چکے ہیں۔ آپریشن کے پہلے مرحلے کے کچھ اہداف باقی ہیں۔ دوسرے مرحلے میں مزید شدت آئے گی جبکہ کراچی آپریشن کا حتمی مرحلہ تیسرا ہوگا۔ چودھری نثار نے کہا خفیہ اداروں کی رپورٹ بتاتی ہے کہ مہاجر ریپبلکن آرمی کے رابطے کہیں اور ہیں ۔ مہاجر ریپبلکن آرمی کے بارے میں رپورٹس سابق حکومت کے دور کی ہیں۔ انہوں نے واضح کیا کہ’مہاجر ری پبلکن آرمی‘ کا متحدہ قومی موومنٹ سے کوئی تعلق نہیں، انٹیلی جنس رپورٹ ’مہاجر ری پبلکن آرمی‘ کا تعلق کہیں اور سے بتاتی ہے۔ وزیر داخلہ نے ایک مرتبہ پھر یہ باور کرایا کہ کراچی آپریشن شروع ہونے سے پہلے تمام جماعتوں سے مشاورت کی گئی۔ چودھری نثار نے کہا اب جو بھی اس میں رکاوٹ بنے گا، وہ عوام کے سامنے بے نقاب ہوجائے گا۔ آپریشن وفاقی حکومت نے شروع کرایا اور وفاقی حکومت ہی اس کی نگرانی کر رہی ہے..