مقبول خبریں
اولڈہم کے نوجوانوں کی طرف سے روح پرور محفل، پیر ابو احمد مقصود مدنی کی خصوصی شرکت
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
نیشنل ایکشن پلان کی بدولت سکیورٹی میں نمایاں بہتری آئی: وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان
لندن:ملکی معیشت اور داخلی صورتحال کی بہتری حکومت پاکستان کی دو کلیدی ترجیحات ہیں۔ حکومت کے موثر اور اتفاق رائے پر مبنی نیشنل ایکشن پلان کی بدولت سکیورٹی میں نمایاں بہتری آئی ہے۔ دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی جنگ ختم نہیں ہوئی لیکن سکیورٹی صورتحال میں نمایاں تبدیلی آئی ہے۔ اس بناء پر ملکی معیشت میں دیرپا افزائش دیکھنے کو مل رہی ہے۔ان خیالات کا اظہار پاکستان کے وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان لندن میں دی پاکستان سوسائٹی کے 63 ویں سالانہ عشائیے میں گیسٹ آف آنر کے طور پر کیا جس میں برطانوی وزیر ساجد جاوید نے خصوصی طور پر شرکت کی۔جبکہ پاکستانی ہائی کمشنر سید ابن عباس بھی موجود تھے۔ وزیر داخلہ نے دونوں ملکوں کے عوام کے درمیان روابط استوار کرنے میں پاکستان سوسائٹی کی عمدہ خدمات کو سراہا ، انہوں نے سوسائٹی کو اپنا ایک وفد پاکستان بھیجنے کی دعوت دی تاکہ وہ ملکی معیشت، سلامتی اور اداروں میں ہونے والی مثبت پیشرفت کا مشاہدہ کر سکیں۔ ان کا کہنا تھا کہ جب یہ لوگ وہاں سے واپس آئیں تو یہاں برطانوی معاشرے کو سلسلہ وار گفتگو اور سیمیناروں کے ذریعے ان کے بارے میں بتائیں۔ وزیر داخلہ نے چین پاکستان اقتصادی راہداری کو ایک شاندار پراجیکٹ قرار دیا جس سے نہ صرف پاکستان بلکہ پورے خطے میں ترقی اور خوشحالی آئے گی۔ انہوں نے تارکین وطن اور برطانوی سرمایہ کاروں کو بھی دعوت دی کہ وہ اقتصادی راہداری کی بدولت پاکستان میں پیدا ہونے والے منافع بخش سرمایہ کاری کے مواقع سے فائدہ اٹھائیں۔ دوطرفہ تعلقات پر بات کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے خاص طور پر ذکر کیا کہ وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون پہلے سربراہ مملکت تھے جنہوں نے 2013 میں موجودہ حکومت کے برسراقتدار آنے کے بعد پاکستان کا دورہ کیا۔ انہوں نے وزیراعظم کیمرون کے اس مشہور جملے کو بھی دہرایا جو انہوں نے اپنے دورے کے دوران کہا تھا کہ، ’’پاکستان کا دشمن ہمارا دشمن ہے اور پاکستان کا دوست ہمارا دوست ہے‘‘۔ چودھری نثار نے کہا کہ دوطرفہ تعلقات اتنے اچھے کبھی نہیں رہے لیکن معاشی اور عوام کے درمیان تعلقات کو مزید مستحکم بنانے کے لئے بہت کچھ کیا جا سکتا ہے۔ برطانیہ کی جانب سے گیسٹ آف آنر کے طور پر بزنس، انوویشن اینڈ سکلز کے سیکرٹری آف سٹیٹ ساجد جاوید ایم پی نے اپنی تقریر میں کہا کہ پاکستان اور برطانیہ کے تعلقات ہر سطح پر مضبوط ہیں اور ان کی جڑیں مشترکہ اقدار، ثقافت اور تاریخ میں ہیں جنہیں برطانیہ میں مضبوط پاکستانی کمیونٹی کی موجودگی سے مزید تقویت ملتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستانی بزنس میں افزائش اور سرمایہ کاری کی ناقابل یقین استعداد موجود ہے اور 120 سے زائد برطانوی کمپنیوں کی سرگرمیاں اس کا ثبوت ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان برطانوی حکومت کے لئے اہم ہے اور پاکستان کے لئے برطانیہ کا بین الاقوامی ترقیاتی بجٹ ہمارے دوطرفہ امدادی پروگراموں میں سب سے بڑا ہے۔ آخر میں پاکستان سوسائٹی کے چیئرمین سر ولیم بلیک برن نے تمام مہمانوں اور عشائیہ کے انتظامات میں حصہ لینے والے تمام افراد کا شکریہ ادا کیا۔ پاکستان سوسائٹی کی بنیاد 1951 میں رکھی گئی۔ سوسائٹی کے پیٹرنز میں پرنس فلپ ڈیوک آف ایڈنبرگ اور صدر اسلامی جمہوریہ پاکستان شامل ہیں۔ لندن میں واقع پاکستان سوسائٹی برطانیہ میں باقاعدگی کے ساتھ لیکچرز، اجلاسوں اور سماجی تقریبات کے ذریعے پاکستان کے آرٹس، تاریخ، آثار قدیمہ اور جغرافیہ کے علاوہ اس کی معاشی زندگی اور سیاسی اداروں کے بارے میں عوامی معلومات بہتر بنانے کے لئے کوششیں کر رہی ہے۔