مقبول خبریں
بین الاقوامی میڈیا نے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی جارحیت کی کلی کھول دی ہے:سردار مسعود خان
ڈیبی ابراھم کی قیادت میں ممبران پارلیمنٹ اور کمیونٹی رہنماؤں کی لارڈ طارق احمد سے ملاقات
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز اورسیمینارز منعقد کریگی : راجہ نجابت
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
سید حسین شہید سرور کی وزیراعظم آزاد کشمیر راجہ فاروق حیدر اور شاہ غلام قادر سے ملاقات
پارک ویو کمیونٹی سنٹر شہیر واٹر میں ہمنوا یو کے کے زیرِ اہتمام یوم آزادی پاکستان تقریب کا انعقاد
9ستمبر کو اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل کے باہر بھرپور مظاہرہ کرینگے:راجہ نجابت حسین
سوچنے کے موسم میں سوچنا ضروری ہے!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی برسلز آمد، سینکڑوں پاکستانی و کشمیری مظاہرین کااحتجاج
بریڈفورڈ . . . بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کی برسلز آمد پر سینکڑوں پاکستانی و کشمیری مظاہرین نے احتجاج کیا۔ مظاہرین کا کہنا تھا یورپی یونین کشمیر میں بھارتی فوج کے ظلم و ستم کا نوٹس لے ۔ یورپی یونین قاتل مودی کے داخلے پر پابندی لگائے ۔ مظاہرے میں سکھ بھی شریک ہوئے ۔بھارتی وزیراعظم نریندر مودی برسلز کے دورے پر بعد میں پہنچے مظاہرے پہلے شروع ہو گئے ۔ پی ٹی آئی کے سینئر رہنما بیرسٹر سلطان محمود احتجاج میں خصوصی طور پرشریک ہوئے ۔ مودی کی یورپی ارکان پارلیمنٹ سے ملاقات کے دوران مظاہرین نے اس عمارت کے باہر شدید احتجاج کیا۔ اس موقع پر مسلمانوں کا قاتل مودی قاتل ،کشمیر میں ظلم بند کرو ،بھارت کشمیر چھوڑ دو، لے کے رہیں گے آزادی ہے حق ہمارا آزادی، گو مودی گو جیسے فلک شگاف نعرے لگائے گئے ۔ اس موقع پر شرکاء سے بیرسٹر سلطان محمود چوہدری نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مودی جہاں بھی جائیں گے ان کا تعاقب کریں گے ۔ مظاہرین کا کہنا تھا بھارت کشمیر سے اپنی فوجیں نکالے ۔ وہ جہاں بھی قدم رکھتے ہیں دہشتگردی شروع ہو جاتی ہے ۔ مظاہرے میں شریک سکھوں کا کہنا تھا مودی قاتل اور نام نہاد جمہوریت کا راگ الاپتا ہے ۔ بھارت میں جمہوریت نہیں وہاں اقلیتوں پر ظلم و ستم کے پہاڑ توڑے جا رہے ہیں۔مودی بدھ کی صبح زاوینٹم ایئر پورٹ پہنچے تو وہاں سے سیدھے وہ میئل بیک میٹرو سٹیشن گئے جہاں انہوں نے یادگار پر پھول چڑھائے ۔انہوں نے یورپی پارلیمنٹ کے اراکین اور وزیر اعظم چارلس میکل کے ساتھ لنچ کیا اور دوطرفہ تعلقات کے فروغ پر تبادلہ خیال کیا۔مودی نے بیلجیئم کی کمپنیوں کے سی ای اوز سے بھی ملاقات کی جبکہ بھارتی کمیونٹی سے بھی خطاب کیا۔