مقبول خبریں
lets talk گروپ کے زیر اہتمام کمیونٹی کو ذہنی امراض کی آگاہی کے لیے ورکشاپ کا انعقاد
صادق خان رسوائی کا باعث اور برطانیہ کے دارالحکومت لندن کو تباہ کررہے ہیں: ڈونلڈ ٹرمپ
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
سابق صدر پی ٹی آئی یارکشائر اینڈ ہمبر ریجن طاہر ایوب خواجہ کا اپنی رہائش گاہ پر محفل کا انعقاد
رنگ خوشبو سے جو ٹکرائیں تو منظر مہکے!!!!!!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
پاکستانی ہائی کمشنر کی انٹرنیشنل میری ٹائم آرگنائزیشن کے نئے سیکریٹری جنرل سے ملاقات
لندن:برطانیہ میں پاکستان کے ہائی کمشنر سید ابن عباس نے انٹرنیشنل میری ٹائم آرگنائزیشن (آئی ایم او) کے نئے سیکرٹری جنرل سے لندن میں آئی ایم او ہیڈکوارٹرز میں ملاقات کی۔ ہائی کمشنر نے تنظیم کے سربراہ کی حیثیت سے تقرری پر انہیں مبارکباد پیش کی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان آئی ایم او کے رکن کی حیثیت سے جہاز رانی کی صنعت کو محفوظ بنانے کے لئے تنظیم کی طرف سے کی جانے والی کوششوں کی حمایت کرتا ہے۔ اس موقع پر سیکرٹری جنرل کو پاکستان کی مختلف بندرگاہوں بالخصوص گوادر کی بندرگاہ اور چین پاکستان اقتصادی راہداری کے سیاق وسباق میں اس کی نمایاں حیثیت کے بارے میں بھی آگاہ کیا گیا۔ سیکرٹری جنرل نے جہاز رانی کی بین الاقوامی صنعت میں پاکستان کے کردار کو سراہا۔ انہوں نے کہا کہ جہازرانی اور بندرگاہوں کی صنعت ملکی تجارت میں کلیدی حیثیت رکھتی ہے۔ اس تناظر میں انہوں نے تنظیم کی سرگرمیوں میں پاکستان کی شمولیت بہتر بنانے پر زور دیا۔ انہوں نے پاکستان میں میری ٹائم مہارتوں کی ترقی میں آئی ایم او کو ایک شاندار وسیلہ قرار دیا۔ ہائی کمشنر نے آئی ایم او کے ٹیکنیکل کواپریشن فنڈ کے ذریعے تعاون بہتر بنانے کی تجویز پیش کی۔ اس میں انسانی وسائل کی تربیت، استعداد میں بہتری کے علاوہ ورلڈ میری ٹائم یونیورستی اور انٹرنیشنل میری ٹائم لاء انسٹی ٹیوٹ کے ساتھ اشتراک بھی شامل ہو گا۔ ہائی کمشنر نے سیکرٹری جنرل کو پاکستان کا دورہ کرنے کی دعوت بھی دی جو انہوں نے قبول کر لی۔