مقبول خبریں
راچڈیل مساجد کونسل کی طرف سے مئیر کونسلر محمد زمان کی مئیر چیرٹیز کیلئے فنڈ ریزنگ ڈنر کا اہتمام
اوورسیز پاکستانیوں کے لئے خصوصی سیل بنایا جانا چاہئے: سلیم مانڈوی والا
مسئلہ کشمیر کو پر امن طریقے سے حل کیا جائے: برطانوی و یورپی ارکان پارلیمنٹ کا مطالبہ
برطانیہ میں آباد تارکین وطن کی مسئلہ کشمیر پر کاوشیں قابل تحسین ہیں:چوہدری محمد سرور
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
کشمیریوں کو ان کا حق دیئے بغیر خطے میں پائیدار امن کا حصول ممکن نہیں: راجہ نجابت حسین
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
برطانیہ میں مقیم کشمیری و پاکستانی 16مارچ کو بھارت کے خلاف مظاہرہ کریں گے: راجہ نجابت حسین
وہ بے خبر تھا سمندر کی بے نیازی سے!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
راجہ اللہ دتہ کی خدمات لائق تحسین، ہم آہنگی کیلئے کلیدی کردار ادا کیا:میئر والتھم فاریسٹ
لندن ...سابق چیئرمین والتھم فاریسٹ اسلامک ایسوسی ایشن راجہ اللہ دتہ خان کا نام مشرقی لندن میں رہنے والی محروم کمیونٹیز میں انسانی ہمدردی، خدمت اور اعتماد کی علامت سمجھا جاتا ہے۔ وہ رنگ، عقیدے، صنف یا مذہب سے قطع نظر ضرورت مند افراد کی مدد میں ہمیشہ پیش پیش رہے ہیں۔ان خیالات کا اظہار مختلف مقررین نے میئروالتھم فاریسٹ کی جانب سے راجہ اللہ دتہ کے اعزاز میں منعقدہ ایک تقریب میں کیا جس میں انکی خدمات پر انہیں کمیونٹی ایوارڈ سے نوازا گیا۔ مققرین جن میں صدر پاکستان پریس کلب یوکے مبین چوہدری، کونسلر راجہ انور، کمیونٹی رہنما اسحاق مسیح و دیگر شامل تھے۔ نظامت کے فرائض کیبنٹ ممبر کونسلر احسان راجہ نے ادا کیئے۔ مقررین کا کہنا تھا کہ تیس سالہ عرصے کے دوران اللہ دتہ خان اپنی ذاتی کاوشوں کی بدولت کمیونٹیز کے مختلف طبقات کے درمیان ہم آہنگی اور امن کے قیام میں کلیدی کردار ادا کرتے رہے ہیں اور اس سلسلے میں وہ تعلیمی سرگرمیوں کے علاوہ تمام لوگوں کے درمیان بہتر مفاہمت اور اعتماد کے فروغ کے لئے بین العقائد اور کثیر ثقافتی سیمیناروں اور گفتگوؤں کا اہتمام کرتے رہے ہیں۔ اللہ دتہ خان رقم جمع کرنے سے لے کر کپڑے اور ادویات وغیرہ کے لئے مہمیں چلانے سمیت ہر قسم کی سرگرمیوں میں ہمیشہ پیش پیش رہے ہیں اور مشکلیں دنیا میں کہیں بھی ہوں، خواہ وہ جنوبی امریکہ، تھائی لینڈ کے سیلاب ہوں یا افریقہ کی قحط سالی، پاکستان میں زلزلہ ہو یا ایشیا میں سیلاب یا دنیا کے کسی بھی خطے میں کوئی بڑی آفت، انہوں نے ہمیشہ اپنا قائدانہ کردار ادا کیا ہے۔ وہ پوری ثابت قدمی کے ساتھ مقامی چیریٹی اداروں کی معاونت کرتے رہے ہیں جن میں ہیلپ دی ایجڈ، دی چلڈرن فنڈ اور کینسر ریسرچ چند ناموں میں شامل ہیں۔ اس تمام تر عرصے کے دوران انہوں نے کبھی بھی جبری شادیوں کا شکار ہونے والے لڑکوں اور لڑکیوں، عمر رسیدہ ایشیائی باشندوں کی حالت زار، حقوق نسواں جیسے امور سے پہلوتہی نہیں برتی اور وہ ہمیشہ مقامی ہسپتال کی بہتری کے لئے سرگرم عمل رہے ہیں۔ ان کی معاونت اور خدمات ہمیشہ رضاکارانہ اور بلاتامل رہی ہیں۔