مقبول خبریں
پاکستانی کمیونٹی سنٹر اولڈہم میں کپتان محمد منیر میموریل والی بال ٹورنامنٹ کا انعقاد،مانچسٹر کی جیت
پارٹی رہنما شعیب صدیقی کو پاکستان تحریک انصاف پنجاب کا سیکریٹری جنرل بننے پر مبارک باد
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
جس لڑکی نے خواب دکھائے وہ لڑکی نابینا تھی!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
اے پی سی فیصلوں کااحترام اب ہرسیاسی جماعت کاقومی فرض ہے: کامران مائیکل
اسلام آباد ... وفاقی وزیر برائے پورٹس اینڈ شپنگ سینیٹر کامران مائیکل نے کہا ہے کہ اے پی سی کا سنجیدہ اورتعمیری ماحول میں انعقادخوش آئندہے،اس تاریخی ایونٹ کی بھرپورکامیابی پروزیراعظم میاں نوازشریف کو مبارکبادپیش کرتے ہیں۔پاکستان کی سا لمیت کیلئے سیاسی اورفوجی قیادت کاایک پیج پرہونااطمینان بخش ہے،آئندہ بھی اپوزیشن سے سنجیدہ رویے کی امید کرتے ہیں ۔ ملک دشمن قوتوں نے دیکھ لیاپاکستان کی سیاسی قیادت آپس میں متحد ہے، جارحیت ہرگز برداشت نہیں کی جائے گی۔پاکستان کے دفاع اوراستحکام کیلئے معاشرے کاہرطبقہ سیاسی قیادت کی پشت پرکھڑا ہے ۔اے پی سی میں افہام وتفہیم سے ہونیوالے دوررس فیصلوں کااحترام اوران کی پاسداری کرنا اب ہرسیاسی جماعت کاقومی فرض ہے ۔ وزیراعظم میاں نوازشریف نے اے پی سی کے دوران احسن اندازسے اپنا حق اداکردیا اب سیاسی قیادت کی باری ہے۔اپنے ایک بیان میں وفاقی وزیراورسینیٹرکامران مائیکل نے مزید کہا کہ اے پی سی میں ملک وقوم کودرپیش مختلف چیلنجز اورخطرات زیربحث آئے اورسیاسی پارٹیوں کی قیادت نے اپنی اپنی سوجھ بوجھ کے مطابق اظہار خیال کیا جبکہ وزیراعظم میاں نواز شریف نے اپنے خطاب میں صورتحال کادرست نقشہ کھینچااوردوررس تجاویزدیں ۔ اے پی سی کی تجاویزپرتنقیداورفیصلوں سے انحراف کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی ۔وفاقی وزیر اور سینٹ کی کمیٹی برائے حقوق انسانی کے رکن کامران مائیکل نے کہا کہ جبری گمشدگیوں سے متعلق خفیہ اداروں کی کارروائیوں کو ایک ضابطہ کار کے تحت لانا ضروری ہے جس سے بیرون ملک پاکستان کا تشخص بہتر ہوگا۔ اس وقت یہ ملک کا سب سے بڑا مسئلہ ہے جس کا حل متفقہ پالیسی پر عمل درآمد ہی سے ممکن ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ مجوزہ بل پارلیمان کے ایوان بالا کے آئندہ اجلاس میں پیش کرنے کا ارادہ ہے۔