مقبول خبریں
اولڈہم کے نوجوانوں کی طرف سے روح پرور محفل، پیر ابو احمد مقصود مدنی کی خصوصی شرکت
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
صحافیوں کے تحفظ میں پاکستان کا ریکارڈ اچھا نہیں حکومت معاملے کوترجیحات میں شامل کرے
کراچی ...صحافیوں کے تحفظ کے لیے کام کرنے والی ایک بین الاقوامی تنظیم کمیٹی ٹو پروٹیکٹ جرنلسٹس ’سی پی جے‘ نے ایک پاکستانی صحافی پر کراچی میں تشدد اور حبس بے جا کے واقعے پر شدید تشویش کا اظہار کرتے ہوئے حکومت سے واقعے کی مکمل تحقیقات اور صحافیوں کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے اقدامات کا مطالبہ کیا ہے۔ تنظیم کے ایشیا پروگرام کے معاون باب ڈیٹز نے بیان میں کہا ہے کہ علی چشتی کو حبس بے جا میں رکھنے اور تشدد کا نشانہ بنانے کے واقعے میں ملوث افراد کو سزا دی جانی چاہیئے۔ انھوں نے وزیراعظم نواز شریف کی حکومت سے مطالبہ کیا کہ ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کے لیے ہر ممکن اقدامات کیے جائیں۔ باب ڈیٹز کے بقول صحافیوں کے تحفظ و سلامتی کے ضمن میں پاکستان کا ریکارڈ اچھا نہیں ہے اور حکومت کو اس معاملے کو اپنی ترجیحات میں شامل کرنا چاہیئے۔ پاکستان میں صحافیوں کی نمائندہ تنظیم پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹ کے عہدیدار پرویز شوکت نے کہا ہے کہ ملک میں دہشت گردی اور امن و امان کی خراب صورتحال کا شکار صحافی برادری بھی بنتی آرہی ہے لیکن ان کی تنظیم صحافیوں کے تحفظ کے لیے اپنی کوششیں جاری رکھے ہوئے ہے۔ موجودہ حکومت نے دہشت گردی کے خلاف موثر کارروائی کا فیصلہ کیا ہے تو دیکھیں ہم امید کرتے ہیں کہ موجودہ حکومت کچھ کر لے گی۔ نیشنل پریس کلب اسلام آباد کے سابق صدر افضل بٹ نے اس ضمن میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ صحافیوں کودہشت گرد گروپوں کا، ڈرگ مافیا، لینڈ مافیا سامنا ہے جن کے خلاف خبر چھپتی ہے وہ لوگ کارروائی کرتے ہیں۔ ہم مایوس نہیں ہیں کیونکہ ہم نہ صرف پاکستان بلکہ پوری دنیا میں اپنے حق کے لیے آواز بلند کر رہے ہیں۔