مقبول خبریں
راچڈیل کیسلمئیرسنٹر میں کمیونٹی کو صحت مند رہنے،حفاظتی تدابیر بارے آگاہی ورکشاپ کا انعقاد
یورپی پارلیمنٹ میں قائم ’’فرینڈز آف کشمیر گروپ‘‘ کی تنظیم سازی کردی گئی
جموں کشمیر تحریک حق خود ارادیت جولائی میں برطانیہ و یورپ میں کانفرنسز،سیمینارز منعقد کریگی
قومی متروکہ وقف املاک بورڈ کا سربراہ پاکستانی ہندو شہری کو لگایا جائے:پاکستان ہندوکونسل کا مطالبہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
مظلوم کشمیری بھائیوں کیلئے پہلے کی طرح آواز بلند کرتے رہیں گے:مئیر کونسلر طاہر محمود ملک
اوورسیز پاکستانیز ویلفیئر کونسل کا وسیم اختر چوہدری اور ملک ندیم عباس کے اعزاز میں استقبالیہ
مسئلہ کشمیر کو برطانیہ و یورپ میں اجاگر کرنے پر تحریکی عہدیداروں کا اہم کردار ہے: امجد بشیر
ہم نے سچ کو دیکھا ہے جھوٹ کے جھروکوں سے!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
پینترہ یا کوئی ڈر؟ اتحادی افواج کے انیس ہزار گمشدہ کنٹینرز میں اسلحہ نہ تھا: امریکی سفارتخانہ کی وضاحت
کراچی...حکومت پاکستان کے سخت گیر ٹارگٹڈ آپریشن کے سلسلے میں رینجرز کو ملنے والے بے پناہ اختیارات کا اثر یا صدر پاکستان آصف علی زرداری کی ایوان صدر سے رخصتی کا ڈر !!! امریکہ نے کہا ہے کہ کراچی میں گم ہونے والے اتحادی افواج کنٹینرز میں اسلحہ نہیں تھا ... پاکستان میں امریکی سفارت خانے سے جاری ہونے والے ایک بیان میں ذرائع ابلاغ میں شائع ہونے والی اُن خبروں کی تردید کی گئی ہے جن میں تاثر دیا جا رہا ہے کہ امریکہ یا ایساف کے گم ہونے والے انیس ہزار کنٹینرز میں اسلحہ اور بارود والے کنٹینرز بھی شامل ہیں جو کہ درست نہیں ہیں۔ بیان میں کہا گیا کہ امریکہ معمول کے مطابق کراچی کی بندرگاہ کو سفارتی اور فوجی سازو سامان کی ترسیل کے لیے استعمال کرتا ہے۔ نہ امریکہ نہ ہی ایساف نے کبھی کراچی کی بندرگاہ کو ہتھیاروں یا بارود کی ترسیل کے لیے استعمال کیا ہے۔ امریکی حکومت اور ایساف کا تمام سازوسامان کا پاکستانی کسٹم حکام سے معائنہ ضروری ہے۔ امریکہ اور ایساف پاکستانی کسٹم حکام سے لائسنس یافتہ اور منظورشدہ ٹرانسپورٹرز کا استعمال کرتے ہیں۔ سفارت خانے سے جاری ہونے والے بیان میں کہا گیا کہ امریکہ دنیا بھر بشمول پاکستان میں داخل ہونے اور گزرنے والے فوجی سازو سامان کا مکمل حساب کتاب رکھتا ہے۔ ہم اس مسئلے پر متعلقہ پاکستانی حکام کے ساتھ رابطے میں ہیں۔ ہم اس بات پر زور دیتے ہیں کہ امریکہ اس قابل ہے کہ وہ اپنے کراچی کی بندرگاہ میں آنے اورجانے والے تمام سازو سامان کا حساب رکھ سکے۔ چند روز قبل یہ خبریں سامنے آئی تھیں کہ امریکہ اور بین الاقوامی اتحاد افواج کے لیے افغانستان جانے والے اسلحے سے بھرے اُنیس ہزار کنٹینرز کراچی سے چوری ہو گئے تھے۔