مقبول خبریں
اولڈہم ٹاؤن میں پہلی جنگ عظیم کی صد سالہ تقریب،جم میکمان،مئیر کونسلر جاوید اقبال و دیگر کی شرکت
مشتاق لاشاری سی بی ای کا پورٹریٹ کونسل ہال میں لگا نے کی تقریب، بیگم صنم بھٹو نے نقاب کشائی کی
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
کراچی میں رینجرز کی سربراہی میں فوری ٹارگٹڈ آپریشن کیا جائے گا: وفاقی وزیر داخلہ
کراچی... وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا ہے کہ کراچی میں رینجرز کی سربراہی میں فوری طور پر ٹارگٹڈ آپریشن کیا جائے گا۔ وفاقی وزیر داخلہ نے کہا کہ وفاقی سول اور ملٹری انٹیلیجنس ایجنسیوں کے پاس سینکڑوں شرپسند عناصر کے نام ہیں جن کے خلاف رینجرز کی سربراہی میں ٹارگٹڈ آپریشن ہو گا۔ وزیرِاعلیٰ سندھ کی سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دی جائی گی جو اس آپریشن کی نگرانی کرے گی اور اس کو کنٹرول کرے گی۔ کمیٹی میں وفاقی اور صوبائی اداروں کے نمائندے شامل ہوں گے اور اس کمیٹی کا ہفتہ وار اجلاس ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی میں کابینہ اجلاس کے بعد پریس کانفرنس میں کیا اس موقع پر سندھ کے وزیرِ اعلیٰ قائم علی شاہ اور گورنر سندھ عشرت العباد بھی موجود تھے۔ انہوں نے بتایا کہ ڈی جی رینجرز کی سربراہی میں ایک آپریشنل کمیٹی بنائی جائے گئی جس میں آئی جی سندھ اور انٹیلی جنس اداروں کے نمائندے شامل ہوں گے۔ ’اس کے علاوہ ہر ضلعے میں ایک پولیس تھانہ فوکل سٹیشن ہوگا جہاں سنگین نوعیت کے مقدمات میں رینجرز اہلکار بھی تفتیش کا حصہ ہوں گے۔‘ وفاقی وزیرِ داخلہ نے کہا کہ وفاقی وزیر زاہد حامد کی سربراہی میں ایک دوسری کمیٹی بنائی جائے جس میں سندھ کے پراسیکیوٹر جنرل، ایم کیو ایم کے فروغ نسیم ہوں گے۔ انھوں نے کہا کہ یہ کمیٹی پراسیکیوشن اور قانون شہادت میں سقم کو دور کرنے کے لیے تجاویز پیش کرے گی۔ وفاقی وزیرِ داخلہ نے کہا کہ آئی جی سندھ کو اختیار دیا گیا ہے کہ وہ سندھ پولیس میں اصلاحات لائیں اور اس کو جرائم پیشہ افراد سے پاک کریں۔ انھوں نے کہا کہ کابینہ کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ رینجرز کو جرائم پیشہ افراد کو حراست میں لینے، ان سے تفتیش کرنے اور دیگر معاملات کے حوالے سے خدشات ہیں جنھیں ایک پالیسی گائیڈ کو منظور کرکے دور کیا جائے گا۔ اس سے قبل وزیر اعظم پاکستان میاں نواز شریف نے بھی کراچی میں وفاقی کابینہ کے خصوصی اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے بدامنی سے نمٹنے کے لیے رینجرز کو مرکزی کردار دینے کی تجویز پیش کی تھی۔