مقبول خبریں
اولڈہم کے نوجوانوں کی طرف سے روح پرور محفل، پیر ابو احمد مقصود مدنی کی خصوصی شرکت
کشمیر انسانی حقوق کی پامالیوں کا گڑھ ،اقوام عالم نوٹس لے، بھارت پر دبائو بڑھائے: فاروق حیدر
بھارت اپنے توپ و تفنگ سے اب کشمیری عوام کے جذبہ حریت کو دبا نہیں سکتا:بیرسٹر سلطان
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیا جانا چاہیے تاکہ وہ اپنے مستقبل کا فیصلہ کر سکیں : مقررین
آدمی کو زندگی کا ساتھ دینا چاہیے!!!
پکچرگیلری
Advertisement
نیا وزیرستان تخلیق کرنے سے پرہیز کیجئے
حضرت مولانا محمد یوسف کاندھلوی ؒ اپنی تصنیف حیات الصحابہؓ میں تحریر کرتے ہیں کہ حضرت ابو ہریرہؓ فرماتے ہیں اسلام میں مجھ پر تین ایسی بڑی مصیبتیں آئی ہیں کہ ویسی کبھی بھی مجھ پر نہیں آئیں۔ ایک تو حضور ﷺ کے انتقال کا حادثہ کیونکہ میں آپ ؐ کا ہمیشہ ساتھ رہنے والا معمولی ساتھی تھا۔ دوسرے حضرت عثمانؓ کی شہادت کا حادثہ، تیسرے توشہ دان کا حادثہ۔ لوگوں نے پوچھا اے ابو ہریرہؓ ! توشہ دان کے حادثہ کا کیا مطلب ہے ؟ فرمایا ہم ایک سفر میں حضور ﷺ کے ساتھ تھے ۔ آپ ؐ نے فرمایا اے ابو ہریرہؓ تمہارے پاس کچھ ہے؟ میں نے کہا تو شہ دان میں کچھ کھجوریں ہیں۔ آپ ؐ نے فرمایا لے آؤ، میں نے کھجوریں نکال کر آپ ؐ کی خدمت میں پیش کر دیں۔ آپ ؐ نے ان پر ہاتھ پھیرا اور برکت کے لیے دعا فرمائی پھر فرمایا دس آدمیوں کو بلا کر لاؤ، میں دس آدمیوں کو بلا لایا۔ انہوں نے پیٹ بھر کر کھجوریں کھائیں پھر اسی طرح دس آدمی آ کر کھاتے رہے۔ یہاں تک کہ سارے لشکر نے کھا لیا اور تو شہ دان میں پھر بھی کھجوریں بچی رہیں۔ آپ ؐ نے فرمایا ابو ہریرہؓ جب تم اس توشہ دان میں سے کھجوریں نکالنا چاہو تو اس میں سے ہاتھ ڈال کر نکالنا اور اسے الٹانا نہیں۔ حضرت ابوہریرہؓ فرماتے ہیں میں حضور ﷺ کی ساری زندگی میں اس سے نکال کر کھاتا رہا پھر حضرت ابوبکرؓ کی ساری زندگی میں اس سے کھاتا رہا۔ پھر حضرت عمرؓ کی ساری زندگی میں اس میں سے کھاتا رہا۔ پھر حضرت عثمانؓ کی ساری زندگی میں اس میں سے کھاتا رہا۔ پھر جب حضرت عثمانؓ شہید ہو گئے تومیرا سامان بھی لٹ گیا اور وہ تو شہ دان بھی لٹ گیا۔ کیا میں آپ لوگوں کو بتانہ دوں کہ میں نے اس میں سے کتنی کھجوریں کھائی ہیں؟ میں نے اس میں سے دو سووسق یعنی ایک ہزار پچاس من سے بھی زیادہ کھجوریں کھائی ہیں۔ حضرت انس بن مالکؓ فرماتے ہیں میری والدہ مجھے حضور ﷺ کے پاس لے گئیں اور عرض کیا یا رسول ﷺ یہ آپ ؐکا چھوٹا سا خادم ہے اس کے لیے دعا فرمادیں تو حضور ﷺ نے یہ دعا فرمائی۔ اے اللہ ! اس کے مال اور اولاد کو زیادہ فرما اور اس کی عمر لمبی فرما اور اس کے تمام گناہ معاف فرما۔ حضرت انسؓ فرماتے ہیں میں اپنے دوکم سو یعنی۹۸بچے دفن کر چکا ہوں یا فرمایا دو اوپر سو یعنی ۱۰۲بچے دفن کر چکا ہوں اور میرے باغ کا پھل سال میں دو مرتبہ آتا ہے اور میری زندگی اتنی لمبی ہو چکی ہے کہ اب زندگی سے دل بھر چکا ہے (۹۳ہجری میں ان کا بصرہ میں ۱۰۳سال کی عمر میں انتقال ہوا)اور حضور ﷺ کی چوتھی دعا کے پورا ہونے کا مجھے یقین ہے یعنی گناہوں کی مغفرت کی دعا۔ قارئین آج کاکالم ہم ایک عجیب کیفیت کے اندر لکھ رہے ہیں آپ نے اکثر برسات کے موسم میں یا کسی بھی موسم میں دھوپ اوربارش کے امتزاج سے ایک نیا موسم جنم لیتے ہوئے دیکھا ہوگا آپ نے برہم اور خوش مزاجوں کے دوران آنکھوں سے بہتے ہوئے آنسو اور مسکراتے ہوئے ہونٹوں کی متضاد کیفیت کو دیکھا ہوگا آج ہمارے اُوپر بھی کچھ ایسی ہی کیفیت طاری ہے قوس وقذح کے رنگ جب فضاؤں میں بکھرتے ہیں تو اس کی خوبصورتیاں دیکھنے والی تمام نگاہوں کو اپنے سحر میں گرفتار کرلیتی ہیں لیکن دیدہ بینا اور دردآشنا دل جانتے ہیں کہ کتنی بدلیوں کی آنکھیں نم ہوتی ہیں اور کیسے مہربان دھوپ نم ہوتی ہوئی ان بدلیوں سے بکھرنے والے فضا میں موجود پاکیزہ آنسوؤں کو رنگوں کی ایک کہکشاں میں تبدیل کردیتی ہے آج کچھ ایسی ہی کیفیت ہمارے دل ونگاہ کی ہے آج منگلاڈیم کو یہ اعزاز حاصل ہوچکا ہے کہ یہ پاکستان کا سب سے بڑا آبی زخیرہ بن چکاہے گزشتہ چالیس سال منگلاڈیم کو ہمیشہ تربیلا ڈیم کے بعد پاکستان کا دوسرا بڑا آبی زخیرہ کہاجاتاتھا تربیلا ڈیم میں مکمل استعداد کے مطابق پانی جب بھر لیاجاتاہے تو اس کی مقدار 65لاکھ ایکڑ فٹ بنتی ہے آج منگلاڈیم 1239فٹ کے لیول تک جا پہنچا ہے جو ڈیڈ لیول سے صرف تین فٹ کم ہے اور موجودہ لیول پر اس میں زخیرہ شدہ پانی کی مقدار 70لاکھ ایکڑ فٹ سے زائد ہوچکی ہے 1210فٹ سے بڑھا کر منگلاڈیم کو 1242تک ریز کیاگیا اور ماہرین کے اعدادوشمار کے مطابق اس ریزنگ کے بعد ہر سال منگلاڈیم سے وطن عزیز کو بجلی اور پانی کی مد میں 60ارب روپے سے زائد کا کم از کم فائدہ ہوگا دیگر فوائد کا تخمینہ ابھی لگانا باقی ہے علامہ اقبال ؒ نے خونِ صد ہزار انجم سے سحر پیداہونے کی ایک تمثیل اپنے اشعار میں استعمال کی جو امر ہوگئی اس تمثیل میں علامہ اقبالؒ امت مسلمہ اور ہر مایوس انسان کو پیغام دیتے ہیں کہ موجودہ کٹھن حالات سے ہر گز پریشان نہیں ہونا چاہیے کیونکہ فطرت کا یہ کھیل ہے اور روزانہ کا معمول ہے کہ ہزار ہا نہیں بلکہ لاکھوں کروڑوں اور اربوں ستاروں کے قربان ہونے سے خوبصورت سحر نمودار ہوتی ہے منگلاڈیم کی صورت میں پاکستان کی مانگ کو ستاروں سے مزین کرنے کیلئے میرپور کے ان پڑھ ،دیانت دار اور سادہ مزاج لوگوں نے 1960کی دہائی میں بھی پاکستانی تاریخ کی سب سے بڑی مستقل ہجرت اختیار کی تھی اور آج 2013میں تقریباً 50سال بعد اہل میرپور کی تیسری نسل نے ایک مرتبہ پھر ہجرت کا کرب برداشت کیا لیکن وطن عزیز کو چراغوں سے سجانے کیلئے ایک مثال قائم کردی ایک ناقابل فراموش اور قابل تقلید مثال ۔۔۔جی ہاں ناقابل فراموش اور قابل تقلید مثال ۔۔۔پاکستان کے تمام صوبوں اور تمام علاقوں کے لوگوں کو اہل میرپور نے دوسری مرتبہ یہ عملی پیغام دے دیا کہ یہ وطن یہ ملک اتنا قیمتی ہے کہ اس کیلئے ہم اپنی قیمتی ترین متاع اپنے آباؤاجداد کی قبریں ،اپنی جائیدادیں ،اپنے کاروبار اور سب سے قیمتی اپنی یادیں منگلاڈیم کے پانی کی نذر کرسکتے ہیں صرف اس خواہش اورحسرت کیلئے کہ یہ وطن تاقیامت رہے ترقی کرے اور سلامت رہے اب کالا باغ ڈیم بھی بننا چاہیے ،اب بھاشا ڈیم بھی بننا چاہیے ،اب کرم تنگی ڈیم بھی بننا چاہیے ،اب پاکستان بھر میں سینکڑوں ڈیم بننے چاہئیں ۔ قارئین آئیے علمی بنیاد وں پر چند باتیں سمجھتے جائیں منگلاڈیم بنانے کا منصوبہ جنرل ایوب خان نے بنایا اور اسے پایہ تکمیل تک پہنچایا منگلاڈیم بناتے ہوئے جنرل ایوب خان کی حکومت ،واپڈا اور آزادکشمیر حکومت نے اجڑنے والے ہزاروں اہل میرپور سے ’’معاہدہ منگلاڈیم ‘‘کی شکل میں کچھ وعدے کیے چند وعدے پورے ہوئے اور اکثر سراب بن کر عذاب بنے شباب گزر گئے نسلیں مٹی میں مل گئیں وہ وعدے وفانہ ہوسکے ان وعدوں میں ایک وعدہ یہ بھی تھا کہ اہل میرپور کو اس عظیم قربانی کے اعتراف میں تاحیات بجلی مفت فراہم کی جائے گی ان وعدوں میں ایک وعدہ یہ بھی تھا کہ اجڑنے والے خاندانوں کو صحت تعلیم اور زندگی کی بنیادی ضروریات سبسڈی یعنی رعایتی نرخوں پر فراہم کی جائیں گی علی ہذالاقیاس جتنے منہ اتنی باتیں یہ معاہدہ لکھے جانے کے فوراً بعد سینہ گزٹ سے پھیلنے والی اطلاعات کے مطابق وفاقی حکومت کی طرف سے بھیجے گئے لینٹ آفیسر یعنی چیف سیکرٹری ایک مقدس دستاویز سمجھ کر اپنے ساتھ لے گئے اوروہ دن ہے اور آج کا دن مجنوں لیلیٰ کے انتظار میں ہے نہ لیلیٰ کو آنے دیاجارہاہے اور نہ ہی بیقرار مجنوں کا بڑھتا جنون کم ہونے کا نام لے رہاہے اس سلسلہ میں ایک انتہائی معتبر شخصیت چیف جسٹس ریٹائرڈ آزادجموں کشمیر ہائی کورٹ جسٹس عبدالمجید ملک نے ایف ایم 93میرپور ریڈیو آزادکشمیر میں گفتگو کرتے ہوئے تاریخی رازوں سے پردہ ہٹایاتھا جسٹس ملک کا کہنا تھا کہ معاہدہ منگلاڈیم ایک سچی دستاویز تھی جسے چند خود غرض لوگوں نے اپنی خودغرضی کی نذر کردیا ان نااہل لوگوں کی اس حرکت کی وجہ سے اہل میرپور بددل ہوئے اور سینکڑوں نہیں بلکہ ہزاروں خاندان جنہیں جنوبی پنجاب اور سندھ کے علاقوں میں ان کی آبائی زمینوں کے متبادل جگہیں دی گئیں وہ لوگ کھڑے کھڑے لٹ گئے ان کے خاندان بکھر گئے اور تسبیح کے دانوں کی طرح ایک ایک فرد جدا ہوگیا ان کی تہذیب ان کا تمدن ان کی ثقافت اس ڈیم کے پانی کی نذر ہوگئی ان کی اشک شوئی کرنے کی بجائے ان کے زخموں پر نمک چھڑکا گیا یہ تو ان مخلص دیانت دار اور سادہ لوح افراد کے سچے اور سُچے جذبے تھے کہ اللہ تعالیٰ نے ان کی لاج رکھ لی اوران کی قربانیوں سے جنم لینے والے میرپور کو چھوٹا برطانیہ بنادیا آج اس شہر کے دس لاکھ سے زائد افراد برطانیہ کی شہریت رکھتے ہیں اور اس شہر کو ہی یہ اعزاز حاصل ہے کہ یہ فارن ایکسچینج کی مد میں پاکستان کو ہرسال اربوں پاؤنڈز فراہم کرتاہے سعودی عرب میں مقیم پاکستانی اور برطانیہ میں مقیم کشمیری فارن ایکسچینج کی مد میں پاکستان کی ریڑھ کی ہڈی قرار دیئے جاسکتے ہیں ۔ وفاقی حکومت ،وزیر امور کشمیر ،وزیر اعظم آزادکشمیر چیف سیکرٹری ،کمشنر امور منگلاڈیم اوردیگر تمام باوسیلہ لوگ ان بے وسیلہ قربانی دینے والے مہاجروں کی بددعاؤں سے ڈریں ڈڈیال ،پنیام ،پلاک ،چکسواری ،اسلام گڑھ ،میرپور اور اس کے گردونواح کے سینکڑوں دیہات اس ریکارڈ کی نذر ہوچکے ہیں اور ہزاروں خاندانوں کے ایک لاکھ سے قریب افراد اہل پاکستان اور حکمرانوں کی طرف ملتجی نگاہوں سے دیکھ رہے ہیں خدارا ان ملتجی نگاہوں کو مضطرب اور بعدازاں متشدد بننے سے روک لیجئے ایک نیا بلوچستان اورایک نیا وزیرستان تخلیق کرنے سے پرہیز کیجئے ۔قارئین اہل میرپور عشق کی انتہاؤں سے دوسری مرتبہ گزر رہے ہیں اور جوا ب میں وفا کا بدلہ جفا سے دینے کی دوسری انتہا بھی قائم کی جارہی ہے دوسری مرتبہ پہلی غلطی اور پہلی جفا کا ازالہ کردیجئے یہی کشمیر اور پاکستان کے حق میں بہتر ہوگا اللہ متاثرین منگلاڈیم کی مشکلات دور کرے اور پاکستان اور کشمیر میں محبت کے رشتوں کو مضبوط رکھے آمین.. (جنید انصاری .. میرپور )