مقبول خبریں
جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی برطانیہ برانچ کے زیرِ اہتمام فکر مقبول بٹ شہید ورکز یونیٹی کنونشن کا انعقاد
قاضی انویسٹ منٹ کی جانب سے وطن کی محبت میں ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ پائونڈ عطیہ کا اعلان
تحریک حق خود ارادیت انٹر نیشنل کے ساتھ ملکر کشمیر کانفرنس کا انعقاد کرینگے :کرس لیزلے و دیگر
ڈیم سے روکنے کی کوشش پر غداری کا مقدمہ چلے گا: چیف جسٹس پاکستان
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
لوٹن میں بھی پی ٹی آئی کی کامیابی کا جشن، ڈھول کی تھاپ پر سڑکوں پر رقص اور بھنگڑے
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
پاکستان سے تشریف لائے ممبر پنجاب اسمبلی فیاض احمد وڑائچ کا دورہ منہاج ویلفیئر فائونڈیشن
ہم دھوپ میں بادل کی، درختوں کی طرح ہیں!!!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
ڈاکٹر احسان ملک جیسے اساتذہ کی بدولت ہم تعلیم میں اپنا کھویا ہوا مقام دوبارہ حاصل کرینگے: لارڈ میئر برمنگھم
برمنگھم ... پاکستان کو جہاں رب کریم نے بے شمار قدرتی نعمتوں سے نوازا ہے وہیں اس دھرتی کے سپوتوں کو بلا کی ذہانت بھی دی ہے، وہ وطن عزیز میں ہوں یا دنیا کے کسی بھی ملک میں اپنی خداداد صلاحیتوں کا لوہا منوا کر رہتے ہیں۔ ڈاکٹر احسان ملک جیسے استاد تعلیمی درسگاہوں کو ملتے رہے تو وہ دن دور نہیں جب پاکستانی طلبہ تعلیم اور تحقیق میں اپنا کھویا ہوا مقام دوبارہ حاصل کرسکیں گے۔ ان خیالات کا اظہار لارڈ میئر برمنگھم کونسلر شفیق شاہ نے ٹائون ہال میں منعقدہ ایک خصوصی تقریب میں کیا جہاں پنجاب یونیورسٹی کے سابق تاریخ ساز کنٹرولر امتحانات، موجودہ ڈائریکٹر انسٹی ٹیوٹ آف بزنس ایڈمنسٹریشن اور ڈائریکٹر جنرل گوجرانوالہ کیمپس پنجاب یونیورسٹی ڈاکٹراحسان ملک کو انکی علمی اور انتظامی خدمات پر خصوصی ایوارڈ دیا گیا۔ تقریب میں برمنگھم کی سرکردہ شخصیات اور برطانیہ میں مقیم مہمان شخصیت کے چند سابق طالبعلموں نے شرکت کی جن میں ریزیڈنٹ ایڈیٹرروزنامہ اوصاف لندن مبین چوہدری، چیئرمین قائد اعطم ٹرسٹ راجہ اشتیاق احمد، پی ٹی آئی برطانیہ کے مرکزی رہنما چوہدری خادم حسین، تحریک کشمیر یورپ کے صدر محمد غالب، چوہدری شہزاد کریم، سالیسٹر محمد بنیامین، عمر بنیامین، مسلم لیگ ن یوتھ ونگ برطانیہ کے فیصل محمود، سید محمد علی، محمد ایوب سرکھوی، عبدالوحید خان، چوہدری اکرم، حمزہ ملک و دیگر شامل تھے۔ لارڈ میئر کا مزید کہنا تھا کہ دو ماہ کے قلیل عرصے میں امریکہ اور برطانیہ کی معروف یونیورسٹیوں میں عالمی کانفرنسوں کی صدارت کرنا ایک غیر معمولی اقدام ہے جو پاکستان کے ایک فاضل استاد نے کر کے دکھایا جس پر برطانیہ میں مقیم تمام کمیونٹی انہیں خراج تحسین پیش کرتی ہے۔ مہمان خصوصی ڈاکٹر احسان ملک نے اس موقع پر اپنے مختصر اظہار خیال میں اپنے دور میں کئے گئے چند تاریخ ساز کاموں پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے بتایا کہ جب وہ پنجاب یونیورسٹی کے کنٹرولر امتھانات بنے تو دو دہائیوں سے گریجویٹس کی ڈگریاں رکی ہوئی تھیں میں نے ان کے اجرا کا بندوبست کیا اور یونیورسٹی کو پابند کردیا کہ آئیندہ دو سال کے اندر اندر تمام گریجویٹس کو انکی ڈگریاں انکے تعلیمی اداروں یا گھروں میں بھجوا دی جائیں۔ انہوں نے کہا کہ آئی بی اے کا نیا بلاک انہوں نے خالص اپنی مدد آپ کے تحت آٹھ کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر کیا جس میں موجود سہولیات کسی بھی طرح نامور عالمی اداروں سے کم نہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اپنے دور میں انہوں نے کبھی کسی طالبعلم کو اس لیئے تعلیم سے محروم نہ ہونے دیا کہ اس کے کاندان میں اسے اعلیٰ تعلیم دلانے کی سکت نہ تھی ایسے طالبعلموں کیلئے وظائف کا اجرا کیا۔ ڈاکٹر احسان ملک نے بتایا کہ انکے ادارے کر اس امر پر بھی اطمینان ہے کہ کشمیر کے زلزلے کے علاوہ پاکستان میں آنے والی تباہ کن سیلاب میں ادارے کی طرف سے متاثرین کی مدد کی گئی۔ انہوں نے کہا کہ ملک کی خدمت جتنی غریب کے بچے نے کی اتنی امر کے بچے ا بڑے بڑے اداروں میں پڑھ کر نہیں کرسکے۔ تقریب کی نظامت کے فرائض ربنواز چغتائی نے ادا کئے اور کہا ہمیں ڈاکتر احسان ملک جیسی پروقار علمی شخصیت کو برمنگھم میں ویلکم کرکے دلی خوشی ہوئی انکی قابلیت کی گواہی کسی کو بھی گوگل میں انکا نام سرچ کرکے مل سکتی ہے۔ انہوں نے کہا مادر وطن سے آنے والی ایسی شخصیات ہمارے لئے ٹھنڈی ہوا کے جھونکے کی طرح ہیں۔