مقبول خبریں
اولڈہم ہوپ ووڈ ہاؤس ہیلتھ سنٹر میں خواتین کو آگاہی دینے کیلئے لیڈی ہیلتھ ڈے کا اہتمام
بھارتی لابی نے کشمیر کانفرنس کوانے کے لئے اوچھے ہتھکنڈے استعمال کیے: شاہ محمود قریشی
تحریک کشمیر ڈنمارک کے زیر اہتمام کوپن ہیگن میں اظہار یکجہتی کشمیر کانفرنس کا انعقاد
تین طلاقوں پر سزا، اسلامی نظریاتی کونسل کا وسیع پیمانے پر مشاوت کا فیصلہ
مقبوضہ کشمیر میں بھارتی افواج کی فائرنگ سے شہری شہید، حریت رہنماؤں کی شدید مذمت
میئرآف لوٹن (برطانیہ) نے شاہد حسین سید کو کمیونٹی سروسز پر شیلڈ پیش کی
آکاس انٹرنیشنل کی جانب سے پیرس فرانس میں پہلے یورپین فیملی فنگشن کا انعقاد
راجہ نجا بت حسین کی صدر آزاد کشمیر سردار مسعود اور وزیر اعظم راجہ فاروق حیدر سے ملاقات
کشمیر‘ جہاں خواب بھی آنسو کی طرح ہیں!!!!!
پکچرگیلری
Advertisement
وزیر اعظم سےملاقات،مولانا فضل الرحمٰن کی حکومت طالبان مذاکرات میں مدد کی پیشکش
اسلام آباد ...جمعیت علمائے اسلام ف کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن نے وزیر اعظم پاکستان میاں محمد نواز شریف سے خصوصی ملاقات کے دوران حکومت کے طالبان سے مذاکرات میں مدد کی پیشکش کی ہے۔ یہ پیشکش انہوں نے جمعرات کے روز کی۔ مولانا فضل الرحمٰن کا کہنا تھا کہ وہ مذاکرات کے لئے ہر ممکن مدد دینے کو تیار ہیں۔ تاہم، یہ فیصلہ حکومت کو کرنا ہوگا کہ وہ طالبان کے کس گروپ سے مذاکرات میں دلچسپی رکھتی ہے۔ اس سے قبل، جمعیت علمائے اسلام (ایس) کے رہنما مولانا سمیع الحق بھی وزیر اعظم نواز شریف کو مئی میں طالبان سے مذاکرات کرانے میں مدد کی پیشکش کر چکے ہیں۔ مولانا فضل الرحمٰن نے جمعرات کو میڈیا سے بات چیت میں کہا کہ طالبان کے کس گروپ سے مذاکرات ہوں، اس بات کا فیصلہ کسی فورم میں ہونا چاہئے۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ طالبان کو پرامن رکھنے کے لئے باقاعدہ ایک فورم ہو اور اس فورم کی حکمت عملی بھی طالبان پر وضع ہونی چاہئے کیوں کہ طالبان، حکومت کے حوالے سے عدم اعتماد کا شکار ہیں، اعتماد کی فضا بنانے کے لئے فورم کی ضرورت اہم ہے۔ جے یو آئی ف کے سربراہ نے واضح کیا کہ مذاکرات پر دفاعی اور سیاسی حکومت کا موقف ایک ہونا چاہئے، تبھی طالبان مذاکرات کے لئے سنجیدہ ہوسکتے ہیں۔ نواز شریف سے ملاقات کے موقع پر وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید بھی موجود تھے اس موقع پر مولانا فضل الرحمان نے وزیر اعظم نواز شریف سے ان کے ماموں کے انتقال پر فاتحہ خوانی بھی کی ..